The news is by your side.

Advertisement

فائنل ایگزٹ اور خروج وعودہ سے متعلق سعودی حکومت کی اہم ہدایات

ریاض : سعودی حکومت نے غیرملکیوں کے فائنل ایگزٹ اور خروج  وعودہ کے حوالے سے قوانین کی آگاہی کیلئے ہدایات جاری کی ہیں، جس پر عمل درآمد کیے بغیر دستاویزات میں تبدیلی ناممکن ہے۔

سعودی عرب میں غیرملکیوں کے لیے اقامہ اور رہائشی قوانین واضح ہیں جن پر عمل کرنا سب کے لیے لازمی ہے، آجر اور اجیر کے حوالے سے بھی قوانین موجود ہے ان سے آگاہی ضروری ہے۔

سعودی عرب میں غیر ملکیوں کے چھٹی جانے یا مستقل وطن روانگی کے لیے ری انٹری یا فائنل ایگزٹ ویزا لینا ضروری ہے۔ ری انٹری ویزے کو عربی میں خروج وعودہ کہا جاتا ہے جبکہ فائنل ایگزٹ ویزا خروج نہائی کہلاتا ہے۔

ایک شخص نے دریافت کیا ہے کہ میرا فائنل ایگزٹ یعنی خروج نہائی لگ گیا ہے لیکن اب واپس جانے کا ارادہ ملتوی کردیا۔ تو کیا اس صورت میں اپنے خروج نہائی ویزے کو خروج وعودہ میں تبدیل کرسکتا ہوں؟

جوازات کی جانب سے جواب دیا گیا کہ خروج نہائی ویزے کو وقت مقررہ کے اندر (اگر اس کی مدت ختم نہیں ہوئی )منسوخ کرانا ممکن ہے بشرطیکہ کارکن کا اقامہ کارآمد ہو۔

واضح رہے قانون کے مطابق خروج نہائی ویزے کی مدت 60 دن ہوتی ہے اس دوران یا تو سفر کرنا چاہئے اگر مستقل طور پر وطن نہیں جانا اور ویزے کو استعمال نہیں کرنا تو مقررہ مدت یعنی خروج نہائی ویزے لگائے جانے کے 60 دن کے اندر اسے کینسل کرنا لازمی ہے بصورت دیگر قانون کے مطابق جرمانہ عائد کیا جاتا ہے۔

خروج نہائی ویزے کو کینسل کرانے کے لیے لازمی ہے کہ اقامہ کارآمد ہو اگر اقامہ کی مدت ختم ہوگئی ہے تو یہ کارروائی ایک ساتھ انجام دی جانی چاہیے یعنی اقامہ تجدید کی فیس ادا کرکے خروج نہائی کینسل کرایا جائے۔

ایک اور شخص نے پوچھا ہے کہ خروج نہائی پر جانے والا کتنی مدت کے بعد دوسرے ویزے پر آسکتا ہے؟ جوازات کی جانب سے بتایا گیا کہ خروج نہائی ویزے پر جانے والے کے خلاف اگر کسی قسم کی قانون شکنی رجسٹرڈ نہیں ہے اور اس کا ویزا قانون کے مطابق اسٹمپ کیا گیا ہے تو اس کے دوبارہ دوسرے ویزے پر آنے کی کوئی پابندی نہیں وہ جب چاہے واپس آسکتا ہے۔

یاد رہے کہ خروج نہائی ویزہ مستقل بنیادوں پر وطن جانے کے لیے لگایا جاتا ہے اس کی دو قسمیں ہیں۔ ایک خروج نہائی قانونی طور پر جانے والوں کا لگایا جاتا ہے جن کے خلاف کسی قسم کی کوئی قانون شکنی ریکاڈ نہ کی گئی ہے اور ان کا اسپانسر بغیر کسی مطالبے کے خروج نہائی ویزا جاری کرے۔

دوسرا ڈی پیوڈیشن سینٹر کے تحت ایسے غیر ملکیوں کا خروج نہائی ویزا لگایا جاتا ہے جو اقامہ یا محنت قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اپنے مقررہ اسپانسر کے علاوہ کہیں اور کام کرتے ہوئے گرفتار ہوجاتے ہیں ایسے افرادکو ملک سے ڈی پورٹ کرنے کے لیے ان کا خروج نہائی ویزا لگایا جاتا ہے۔

جن افراد کو مختلف الزامات کے تحت ڈی پورٹ کیا جاتا ہے ان پر دوبارہ دوسرے ویزے پر آنے کی پرپابندی عائد ہوتی ہے جس کی مدت ہر کیس میں مختلف ہوتی ہے اس لیے ایسے افراد جو ڈیپوٹیشن سینٹر کے ذریعے خروج نہائی پر جاتے ہیں ان کے بارے میں قانون مختلف ہوتا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں