The news is by your side.

Advertisement

سعودی عرب میں پابندی کے خاتمے کے بعد کار چلانے والی پہلی خاتون

ریاض: سعودی عرب میں خواتین پر کارڈرائیو کرنے کی پابندی کا آج سے خاتمہ ہوگیا،مجدولین العتیق پابندی کے خاتمے کے بعد کار چلانے والی پہلی خاتون بن گئی۔

تفصیلات کے مطابق سعودی عرب میں آج سے خواتین خود گاڑی چلائیں گی، مملکت میں خواتین کے گاڑی چلانے پر 28 سال پہلے پابندی لگی تھی، سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے ستمبر دوہزار سترہ میں خواتین کے گاڑی چلانے پر پابندی ہٹانے کا اعلان کیا تھا جس پر آج سے عملدر آمد شروع ہوگیا۔

رات بارہ بجتے ہی سعودی خاتون مجدولین العتیق اپنی کار ریاض کی سڑکوں پر لے آئیں اور آزادانہ ڈرائیو کرکے پابندی کے خاتمے کے بعد سب پہلے کار چلانے والی خاتون ڈرائیور کا اعزاز حاصل کرلیا۔


سعودی عرب میں 24 جون سے قبل خواتین کی ڈرائیونگ پر جرمانہ ہوگا


عرب اخبار کی رپورٹ کے مطابق سعودی عرب میں دوسرے ممالک کے ڈرائیورز کی تعداد تیرہ لاکھ سے زائد ہے جنہیں سعودی خاندانوں نے ڈرائیور کے طور پر رکھا ہے، انہیں تنخواہ کی مد میں سالانہ 33 ارب ریال دئیے جاتے ہیں۔

دوسری جانب سعودی حکومت نے خبر دار کیا ہے کہ دوران ڈرائیونگ خواتین کی تصویر بنانے پر دو سے پانچ برس قید اور ایک سے تین لاکھ ریال جرمانہ ہوگا، سعودی خواتین کو ڈرائیونگ کی اجازت ملنے سے ملک کو سالانہ بیس ارب ریال کی بچت بھی ہوگی۔


سعودی عرب: خواتین کے ڈرائیونگ سے متعلق تمام تیاریاں مکمل کر لی گئیں


علاوہ ازیں سعودی عرب کے شہر الدمام میں واقع امام عبدالرحمان بن فیصل یونیورسٹی کے ڈرائیونگ اسکول میں اب تک 67 خواتین کو ڈرائیونگ لائسنس جاری کیے جاچکے ہیں جبکہ اس اسکول میں ڈرائیونگ سیکھنے کے لیے 13 ہزار خواتین نے اپنے ناموں کا اندراج کرایا ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں