سعودی کینیڈا تنازعے کے باوجود عرب کا تیل کی فراہمی جاری رکھنے کا فیصلہ
The news is by your side.

Advertisement

سعودی کینیڈا تنازعے کے باوجود عرب کا تیل کی فراہمی جاری رکھنے کا فیصلہ

ریاض: سعودی عرب اور کینیڈا کے درمیان سخت سفارتی تنازعہ پایا جاتا ہے تاہم اس کے باوجود عرب نے کینیڈا کو تیل کی فراہمی جاری رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سعودی عرب میں انسانی حقوق کے کارکنوں کی گرفتاری پر کینیڈا نے تشویش کا اظہار کیا تھا جس کے بعد سے دونوں ملکوں کے سفارتی تعلقات انتہائی خراب ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق سعودی عرب کے وزیر توانائی خالد الفالِح نے کہا ہے کہ ریاض اور اوٹاوا حکومتوں کے درمیان سفارتی تنازعے کے باوجود کینیڈا کے لیے سعودی خام تیل کی فراہمی جاری رہے گی۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب کی جانب سے کینیڈا کو پیٹرولیم مصنوعات کی فراہمی بھی برقرار رہے گی، سفارتی تنازعے کے باوجود عرب نے مذکورہ فیصلہ کیا ہے، تیل کی سپلائی سیاسی کشیدگی سے متاثر نہیں ہوگی۔


کینیڈا کا سعودی عرب سے معافی مانگنے سے انکار


خیال رہے کہ سعودی عرب نے کینیڈا سے درآمد کیے جانے والے اجناس پر پابندی عائد کر رکھی ہے، یہ امر اہم ہے کہ سعودی عرب اور کینیڈا کے درمیان دو طرفہ تجارت کا سالانہ حجم چار ارب ڈالر کے مساوی ہے۔

دوسری جانب کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو نے مونٹریال میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا تھا کہ ہم سعودب عرب سے تعلقات خراب نہیں کرنا چاہتے۔

واضح رہے کہ کینیڈین وزیراعظم نے تسلیم کیا ہے کہ سعودی عرب نے انسانی حقوق کے معاملے پر کافی کام کیا ہے تاہم انہوں نے سعودی عرب سے معافی مانگنے سے انکار کردیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں