The news is by your side.

Advertisement

سعودی عرب:‌ ماں بیٹی نے اکٹھے گریجویشن کر کے نئی مثال قائم کر دی

ابہا: سعودی عرب میں باہمت خاتون نے اپنی بیٹی کے ساتھ کنگ خالد یونی ورسٹی سے گریجویشن کرکے ایک شان دار مثال قائم کردی۔

تفصیلات کے مطابق ابہا کی شہری صالحہ عسیری نے یونی ورسٹی کی سالانہ تقریب میں میڈیا اینڈ ٹیلی کمیونی کیشن کے شعبے میں جب کہ ان کی بیٹی مرام آل مناع نے بزنس ایڈمنسٹریشن میں فارغ التحصیل ہونے پر گریجویشن گاؤن زیب تن کیا۔

صالحہ عسیری نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ان کی شادی کم عمری میں ہوگئی تھی جس کی وجہ سے نویں جماعت میں تعلیم کا سلسلہ رک گیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ کئی برس بعد جب وہ اپنے شہر ابہا لوٹ آئیں تو ان کی بیٹی مرام نے سیکنڈری مرحلہ مکمل کرنے کے بعد انھیں بھی ہوم اسکولنگ سے اپنا تعلیمی سلسلہ پھر سے جوڑنے کے لیے اصرار کیا۔

صالحہ کے مطابق انھوں نے انٹرمیڈیٹ سے لے کر یونی ورسٹی کے آخری دن تک تعلیمی سفر اپنی بیٹی کے ساتھ طے کیا۔ وہ یہ بتاتے ہوئے آب دیدہ ہوگئیں کہ ان کی والدہ انھیں گریجویٹ کے روپ میں دیکھنے کی تمنا لیے ایک سال قبل دنیا سے رخصت ہوگئیں۔

سعودی خواتین کی ڈرائیونگ سے ٹریفک جام ہونے کا خدشہ مسترد

ان کا کہنا تھا کہ اس تعلیمی سفر میں بہت سی مشکلات پیش آئیں لیکن انھوں نے ہمت نہیں ہاری۔ صالحہ کے مطابق اب وہ ملازمت کرکے اپنے بچوں کی مزید بہتر تعلیم و تربیت کا فریضہ ادا کرنا چاہتی ہیں۔

واضح رہے کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کی طرف سے سلطنت میں اصلاحات کا سلسلہ شروع ہونے کے بعد خواتین کی زندگی میں واضح بدلاؤ آگیا ہے۔


 خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں