site
stats
پاکستان

شراب کی فروخت پر پابندی، سپریم کورٹ نے سندھ ہائیکورٹ کا عبوری حکم معطل کردیا

اسلام آباد : سپریم کورٹ نے سندھ میں شراب کی فروخت پرپابندی کا عبوری حکم معطل کردیا، سپریم کورٹ نے سندھ ہائی کورٹ کے فیصلے کو قانون کی منافی قرارد دیا۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں جسٹس اعجاز افضل کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 2 رکنی بنچ نے شراب کی فروخت پر پابندی سے متعلق سندھ ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف درخواست کی سماعت کی۔

دوران سماعت عدالت نے ریمارکس دیے کہ شراب کی فروخت سے متعلق انیس سو اناسی کا قانون موجود ہے، قانون کی خلاف ورزی کی صورت مین متعلقہ تھانے سے رجوع کیا جاسکتا ہے۔

سپریم کورٹ نے سندھ میں شراب کی120 دکانیں بند کرنے کا عبوری حکم معطل عبوری طور پر بند کرتے ہوئے کہا کہ سندھ ہائی کورٹ کا شراب کی دکانیں عبوری طور پر بند کرنے کا حکم قانون کے منافی ہے۔

سپریم کورٹ نے فیصلے کے بعد سماعت غیر معینہ مدت کیلئے ملتوی کردی ہے۔


مزید پڑھیں : سندھ ہائی کورٹ کا صوبے میں تمام شراب خانے بند کرنے کا حکم


یاد رہے کہ چند روز ابل سندھ ہائی کورٹ نے سندھ میں شراب خانے بند کرنے کا حکم دیتے ہوئے کہا تھا کہ جب تک طریقہ کار نہ بن جائے، شراب خانے بند رہیں گے، چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ نےدوران سماعت سوال کیا کہ صوبے میں شراب فروخت کرنے کا کیانظام ہےجس پرایڈوکیٹ جنرل سندھ نے جواب دیتے ہوئے کہاکہ شراب صرف اقلیتوں کو فروخت کی جاتی ہے۔

عدالت نے کہاکہ چیک کرنے کا کیا نظام ہے اور کون ذمے دار ہے،جس پر ایڈوکیٹ جنرل کا کہنا تھا کہ محکمہ ایکسائز ذمے دار ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ سال بھی چیف جسٹس سندھ ہائیکورٹ سجادعلی شاہ نے شراب خانوں کے لائسنس منسوخ کرنے اور بند کرنے کا حکم دیا تھا، جس کے بعد سپریم کورٹ نے شراب کی فروخت پر پابندی کا حکم معطل کرتے ہوئے جسٹس ثاقب نے کہا تھا کہ یہ تاثر نہ لیا جائے عدالت نے شراب کی فروخت جائز قرار دے دی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top