The news is by your side.

Advertisement

اسکول مالک نے اپنے ہی طالب علم کو کیوں اغوا کیا؟

کراچی: طالب علم کو اغوا اور خود تاوان ادائیگی کر کے اس کے اہل خانہ کی نظر میں معتبر ہونے کی خواہش اسکول مالک کو لے ڈوبی۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقے اورنگی ٹاؤن سے 2 روز قبل اغوا ہونے والا 15 سالہ طالب علم مزمل زمان بازیاب کرا لیا گیا، پولیس نے اغوا کے ڈرامے کا ڈراپ سین بھی کر دیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ طالب علم کی بہن سے شادی کے لیے اسکول مالک فضل نے بچے کو اغوا کرنے کا ڈراما رچایا تھا، مغوی بچے کو اورنگی ساڑھے گیارہ میں ایک زیر تعمیر مکان میں رکھا گیا تھا۔

طالب علم مزمل زمان

بچے کو اغوا برائے تاوان کے جرم میں پولیس نے اورنگی ٹاؤن سیکٹر ساڑھے گیارہ میں ہونے والی واردات کے ماسٹر مائنڈ فضل اور اس کے دوست ارسلان کو گرفتار کر کے ان کے خلاف مقدمہ درج کر لیا ہے، بچے کی بازیابی کے لیے منگھوپیر میں اینٹی وائلنٹ کرائم سیل اور سی پی ایل سی نے مشترکہ کارروائی کی تھی۔

ملزمان کے خلاف تھانہ اقبال مارکیٹ میں مقدمہ مغوی بچے کے کزن جہانزیب کی مدعیت میں درج کیا گیا۔

پولیس حکام کے مطابق 15 سال کے بچے کے لیے 3 لاکھ روپے تاوان طلب کیا گیا تھا، بچے کو اس کے اسکول مالک نے اپنے دوست کے ساتھ مل کر اغوا کیا۔

اینٹی وائلنٹ کرائم سیل کے مطابق بچے کے اہل خانہ تاوان ادا نہیں کر سکتے تھے، اسے اغوا کاروں سے چھڑانے کے لیے اسکول مالک خود ادائیگی کرتا، اسکول مالک پیسے دے کر بچے کے اہل خانہ کی نظر میں معتبر ہونا چاہتا تھا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ملزم مغوی بچے کی بہن سے شادی کرنا چاہتا تھا جس وجہ سے اس نے یہ ڈھونگ رچایا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں