haleem اسکول چوکیدار پر تشدد، حلیم عادل شیخ کیخلاف دو مقدمات درج school
The news is by your side.

Advertisement

اسکول چوکیدار پر تشدد، حلیم عادل شیخ کیخلاف دو مقدمات درج

کراچی : پی ٹی آئی رہنما کو اسکول کے چوکیدار پر تشدد کر کے ہیرو بننا مہنگا پڑگیا، پولیس نے کار سرکار میں مداخلت، ہنگامہ آرائی اور دیگر دفعات کے تحت حلیم عادل شیخ کیخلاف دو مقدمات درج کرلیے۔

تفصیلات کے مطابق ابراہیم حیدری پولیس نے اسکول چوکیدار پر لگنے والے مبینہ الزامات کے بعد اسکول میں ہنگامہ آرائی اور پولیس موبائل میں چڑھ کر ملزم پر تشدد کرنے پرحلیم عادل شیخ کے خلاف 2مقدمات درج کر لئے ہیں۔

ایک مقدمہ کار سرکار میں مداخلت، ہنگامہ آرائی جبکہ دوسرا مقدمہ اسکول انتظامیہ جانب سے درج کرایا گیا ہے، اس معاملے میں حلیم عادل شیخ کے علاوہ متعدد افراد کو بھی نامزد کیا گیا ہے۔

مقدمے کے اندراج پر ترجمان  تحریک انصاف کی مذمت

دوسری جانب پی ٹی آئی کے ترجمان فواد چوہدری نے کہا ہے کہ حلیم عادل شیخ کےخلاف مقدمے کےاندراج کی مذمت کرتےہیں، پولیس کے سیاسی استعمال سے سندھ کی صورتحال بدتر ہورہی ہے، انہوں نے کہا کہ سیاسی بنیادوں پر حلیم عادل شیخ کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے، انہوں نے ایسا کوئی قدم نہیں اٹھایا کہ جس پر مقدمہ قائم کیا جائے، سندھ حکومت ہوش کےناخن لیتے ہوئے مقدمہ فوری طور پر واپس لے۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز کراچی میں بچی سے زیادتی کی کوشش کے الزام میں ایک اسکول کا چوکیدارگرفتار ہوا تو پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل شیخ بھی ہیرو بننے کی کوشش اوراپنی سیاسی دکان چمکانے پہنچ گئے۔

پولیس موبائل میں بیٹھ کر ملزم کا گلا دبایا اور برا بھلا بھی کہتے رہے، چوکیدار قصوروار ہے بھی یا نہیں، حلیم عادل شیخ نے کسی تفتیش کا انتظار نہ کیا اور چیف جسٹس سے پھانسی دینے کی اپیل بھی کرڈالی۔

انہوں نے اس پر ہی بس نہ کیا اور تمام تماشے کی ویڈیو بنا کر سوشل میڈیا پر شیئر کردی، اے آر وائی نیوز پر خبر نشر ہونے کے بعد آئی جی سندھ اور دیگر اعلیٰ پولیس حکام نے واقعے کا نوٹس لیا تھا۔


مزید پڑھیں: بچی کے ساتھ مبینہ زیادتی، حلیم عادل شیخ کی ہیرو بننے کی ناکام کوشش


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر ضرور شیئر کریں۔ 

 

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں