The news is by your side.

Advertisement

سی ویو: ریس کے دوران اوورٹیک کرنے پر فائرنگ، نوجوان جاں بحق

کراچی : گاڑیوں کی ریس میں اوور ٹیک کرنے کے دوران ٹکر لگنے کے تنازعے پر فائرنگ سے نوجوان جاں بحق اور ساتھی زخمی ہوگیا، پولیس نے دو گاڑیاں تحویل میں لے کر پانچ افراد کو حراست میں لے لیا۔

تفصیلات کے مطابق سی ویو کلفٹن ریسنگ ٹریک پر گاڑیوں کی ریس کے دوران جھگڑے کے بعد ڈبل کیبن سے کار پر ہونے والی فائرنگ سے نوجوان جاں بحق اور ساتھ بیٹھا دوست زخمی ہوگیا۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ کار نے اوور ٹیک کرنے والی ہیوی بائیک کو ٹکر ماری تو ڈبل کیبن میں موجود افراد نے کار کا تعاقب کیا اور گولیاں برسادیں، فائرنگ کے نتیجے میں ظافر نامی نوجوان جاں بحق ہوگیا، مقتول ڈی ایچ اے کا رہائشی اور اے لیول کا طالب علم تھا۔

فائرنگ واقعہ واقعے کی اطلاع ملتے ہی وزیر داخلہ سندھ نے نوٹس لے لیا اور ڈی آئی جی ساؤتھ سے رپورٹ طلب کرلی۔

اس حوالے سے پولیس نے صحافیوں کو بتایا کہ گاڑی پرنائن ایم ایم پستول سے نو فائر کیے گئے جس سےگاڑی کے شیشے ٹوٹے اور ٹائر بھی پھٹ گئے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ گاڑی سے فنگر پرنٹس حاصل کرلیے گئے ہیں، جاں بحق نوجوان کی شناخت چھبیس سالہ ظافر کے نام سے ہوئی، کار میں 4 افراد سوار تھے۔

گاڑی میں سوار دیگر تین نوجوانوں سے پوچھ گچھ کے بعد پولیس نے خالد بن ولید روڈ پر گھر پر چھاپے کے بعد پانچ افراد کو حراست میں لے لیا، ڈبل کیبن سمیت دو گاڑیاں بھی تحویل میں لی گئیں، جن سے اسلحہ بھی برآمد ہوا ہے، گرفتار ملزمان سے مزید تفتیش جاری ہے۔

واقعے کی مزید تفصیلات بتاتے ہوئے ایس ایس پی ساؤتھ جاوید اکبر ریاض کا کہنا تھا کہ مرسڈیز نے ہیوی بائیکر ڈاکٹررحیم کو ہٹ کرکے گرادیا تھا، پیچھے سے آنے والی ڈبل کیبن اور دیگر گاڑیوں نے مرسڈیز کا پیچھا کیا اوراسے جا پکڑا۔

ڈبل کیبن کے ڈرائیور خاوربرنی نے فائرنگ کی، جس سے مرسڈیز میں سوار ظافر کو ایک گولی لگی جس وہ چل بسا، فائرنگ سے زید نامی شخص کو بھی گولیاں لگیں جس سے وہ زخمی ہوگیا۔

پولیس نے بروقت کارروائی کرکے خاوربرنی کو اس کے گھرخالد بن ولید روڈ سے اس کے بھائیوں، گاڑیوں اور اسلحہ سمیت گرفتارکیا، چارسے5افراد زیرحراست ہیں، مزید گرفتاریوں کیلئے چھاپے مارے جارہے ہیں، ملزمان سے تفتیش مکمل کرکے واقعے کا مقدمہ درج کیا جائیگا۔

ایس ایس پی ساؤتھ نے مزید بتایا کہ فائرنگ کرنے والوں کابائیک سوار ڈاکٹررحیم سے کوئی تعلق نہیں، ملزمان نے سوچا تھا کہ مرسڈیز والے لڑکے ہیوی بائیکر کو جان سے مارکر بھاگ گئے جبکہ ڈاکٹررحیم کا کہناہے کہ بائیک اے گرنے کےبعد اسے نہیں پتہ کہ کیاہوا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں