The news is by your side.

Advertisement

نجی تعلیمی اداروں کے نصف سے زیادہ بچے سرعام منشیات کا استعمال کرتے ہیں، رپورٹ

اسلام آباد : سینیٹ کمیٹی کے اجلاس میں اینٹی نارکوٹکس حکام نے انکشاف کیا ہے کہ نجی تعلیمی اداروں کے نصف سے زیادہ بچے اسکولوں میں ہی سرعام منشیات کا استعمال کرتے ہیں۔

اسلام آباد میں سینیٹ کمیٹی کا اجلاس ہوا، اجلاس میں اینٹی نارکوٹکس حکام کے تہلکہ خیزانکشاف نے سب کے ہوش اڑادیئے، قائمہ کمیٹی کو بتایا گیا کہ اسکولوں اور کالجز میں منشیات کا استعمال عام ہوگیا ہے، آٹھ سال تک کے بچے بھی نشے کے عادی ہیں۔

سیکرٹری اینٹی نارکوٹکس نے قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کو بتایا کہ امیر شہریوں کے زیادہ تر بچے نشے کے عادی ہیں، پارٹیوں میں کوکین اورہیروئن کا نشہ کیا جاتا ہے، منشیات کے عادی بچوں کو اساتذہ یا ان کے ساتھی بچے منشیات فراہم کر رہے ہیں، انتالیس سال تک کی عمر کے ساٹھ لاکھ سے زائد افراد منشیات کی لت میں مبتلا ہیں۔

کمیٹی نے تمام متعلقہ اداروں سے پندرہ دن میں مکمل رپورٹ کے ساتھ تمام آئی جی، چیف سیکریٹری اور ہوم سیکریٹری کو طلب کرلیا ہے۔

چیئرمین کمیٹی رحمان ملک نے افغانستان کو سرکاری سطح پر افیون پیدا کرنے والا ملک قرار دیا  اور کہا کہ پاکستان میں ایک کروڑ افراد منشیات کےعادی ہیں۔


مزید پڑھیں : پاکستان میں 67 لاکھ افراد نشے کے عادی ہیں، رپورٹ


کمیٹی کو این جی او ساسی کی سربراہ ماریہ سلطان نے بتایا کہ اسلام آباد کے اسکولوں میں منشیات کا استعمال تیزی سے بڑھ رھا ہے، آٹھ سال تک کے بچے منشیات استعمال کرتے ہیں۔

سینٹر طلحہ محمود نے کہا کہ اسکولوں میں منشیات کے استعمال کی بہت سی شکایات ملی ہیں، اسلام آباد کے تمام بڑے اسکولز کے بیشتر بچے بچیاں اس لت میں پڑ چکے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں