The news is by your side.

Advertisement

طلبہ منشیات کے عادی ہونے کے تشویش ناک بیان پر وزارتِ داخلہ سے رپورٹ طلب

اسلام آباد: سینیٹ کی داخلہ کمیٹی نے وفاقی دار الحکومت کے اسکولوں میں طلبہ میں منشیات کے استعمال کی تشویش ناک شرح کے بیان پر وزارتِ داخلہ سے تفصیلی رپورٹ طلب کر لی۔

تفصیلات کے مطابق سینیٹ کی داخلہ کمیٹی کے اجلاس میں اسکولوں میں بچوں کی کرسٹل نشے کی عادت پر بحث کی گئی، کمیٹی نے وزیرِ مملکت برائے داخلہ کے بیان پر اظہارِ تشویش کیا۔

وزیرِ مملکت داخلہ کے بیان کے بعد والدین پریشانی میں مبتلا ہو گئے ہیں۔

سینیٹ کمیٹی

کمیٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سینیٹر جاوید عباسی نے کہا کہ طلبہ کے منشیات کے عادی ہونے کی شرح انتہائی خطرناک ہے۔

جاوید عباسی نے وزارتِ داخلہ سے اس بات کی وضاحت طلب کی کہ بتایا جائے کہ اسکولوں میں 75 فی صد طالبات کس طرح منشیات کی لت میں گرفتار ہوئیں۔

سینیٹر جاوید عباسی نے کہا کہ وزیرِ مملکت داخلہ کے بیان کے بعد والدین پریشانی میں مبتلا ہو گئے ہیں۔

دریں اثنا سینیٹ کی داخلہ کمیٹی نے سوال کیا کہ وزارتِ داخلہ کے پاس ڈیٹا موجود ہے تو اس پر اب تک کیا ایکشن لیاگیا؟


یہ بھی پڑھیں:  بڑے بڑے اسکولوں کے کیفوں میں آئس ہیروئن بک رہی ہے: شہریار آفریدی


یاد رہے دو دن قبل وزیرِ مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے پریس کانفرنس میں انکشاف کیا تھا کہ اسلام آباد کے بڑے اور نامور اسکولوں کے کیفیز میں آئس ہیروئن بک رہی ہے۔

انھوں نے بتایا کہ آئس ہیروئن کینڈی کی طرح ہوتی ہے اور کینڈی ریپر میں دی جاتی ہے اس لیے والدین کو پتا نہیں چلتا۔

شہریار آفریدی نے اعداد و شمار پیش کرتے ہوئے کہا تھا کہ اسلام آباد کے ٹاپ اسکولوں میں ایک سروے کیا گیا، معلوم ہوا کہ 75 فی صد لڑکیاں اور 45 فی صد لڑکےکرسٹل آئس استعمال کرتے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں