The news is by your side.

Advertisement

ادویات کی قیمتوں میں اضافہ، قائمہ کمیٹی کا ذمہ داروں کے خلاف کاروائی کا حکم

اسلام آباد: سینیٹ کی قائمہ کمیٹی صحت نے دواؤں کی قیمتوں میں ازخود اضافے کا نوٹس لیتے ہوئے کمپنیوں سے

اضافہ واپس لینے کا مطالبہ کردیا، وزارت صحت اور متعلقہ اداروں کو ذمہ داروں کے خلاف فوری کارروائی کی
ہدایت کردی گئی۔

قائمہ کمیٹی کا اجلاس سینیٹرساجد حسین طوری کی زیرصدارت پارلیمنٹ ہاؤس میں ہوا۔ ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی
پاکستان کے حکام نے کمیٹی کو دواؤں کی قیمتوں میں از خود اضافے اور حکومتی اقدامات پر بریفنگ دی۔

ان کا کہنا تھا کہ چند دوا ساز کمپنیوں نے ایک دوا کی آڑمیں متعدد دواؤں کی قیمتوں میں ازخود اضافہ کردیا ہے۔
چیئرمین کمیٹی کا کہنا تھا کہ قیمتوں میں اضافہ کرنے والوں نے لوٹ مار کا بازار گرم کر رکھا ہے، وزارت صحت
اور متعلقہ حکام قیمتوں میں اضافہ کرنے والوں کے خلاف سخت ایکشن لیں۔

ان کا کہنا تھا کہ قیمتوں میں اضافے کا تعین حقائق کو سامنے رکھ کرکرتے ہوئے عوام کو ریلیف فراہم کیا جائے۔
کمیٹی اراکین کا کہنا تھا کہ قیمتوں میں اضافہ انتہائی نا مناسب ہے، کمپنیاں فیصلہ فورا واپس لیں جبکہ وزارت اور
متعلقہ ادارے اس سلسلے میں فوری کارروائی کرتے ہوئے کسی کے ساتھ رعایت نہ برتی۔

وزیر مملکت برائے قومی صحت سائرہ افضل تارڑکا کہنا تھا کہ مریض مہنگی ادویات کا ازخود بائیکاٹ کریں یا
پھرڈاکٹرزکی جانب سے تجویز کی گئی بڑی کمپنیوں کی مہنگی دواؤں کے بجائے اسی فارمولے کی سستی دوا
خریدیں۔

وزیر صحت نے ڈاکٹرزکو صحت کے شعبے میں کرپشن کا اولین ذمہ دارقراردیتے ہوئے الزام عائد کیا کہ کرپشن
کا آغازڈاکٹرزسے ہوتا ہے کمپنیاں مہنگی دوا کے فروغ کیلئے سب سے پہلے ڈاکٹرز کو خرید لیتی ہیں۔

سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے صحت نے پاکستان تحقیقاتی کونسل برائے صحت بل 2015منظورکرلیا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں