The news is by your side.

Advertisement

کسی گروہ کو مسلح ہوکر چلنے کی اجازت نہیں دی جائے گی، شاہ محمود قریشی

اسلام آباد : وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ جمہوریت میں کسی لٹھ برداری کی گنجائش نہیں ہوتی، کسی گروہ کو مسلح ہوکر چلنے کی اجازت نہیں دی جائے گی، پر امید ہوں کہ پاکستان ایف اے ٹی ایف گرے لسٹ سے نکل جائے گا۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، انہوں نے کہا کہ احتجاج سے متعلق عدالت کے فیصلوں پر من وعن عمل ہوگا۔

نیب کا قانون واضح کہتا ہے کہ ملیشیاز کی اجازت کسی کو نہیں ہوگی اور کسی گروہ کو مسلح ہوکر چلنے کی اجازت نہیں دی جائے گی کیونکہ کسی لٹھ برداری کی جمہوریت میں گنجائش نہیں ہوتی، جمہوریت میں مختلف فورمز ہوتے ہیں جہاں بات کی جاتی ہے۔

ایک سوال کے جواب میں وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ ایف اے ٹی ایف میں پاکستان کا مقدمہ بھرپور اندازمیں لڑا جارہا ہے، پاکستان دنیا کو قائل کررہا ہے کہ ہم نے یہ اقدامات اور ریفارمز کی ہیں، حماد اظہر کی سربراہی میں ٹیم بہترین کام کررہی ہے۔

میں پر امید ہوں کہ پاکستان ایف اے ٹی ایف گرے لسٹ سے نکل جائے گا حالانکہ بھارت نے اپنی پوری کوشش کی کہ کسی بھی طرح پاکستان کو ایف اے ٹی ایف میں بلیک لسٹ کیا جائے۔

انہوں نے بتایا کہ بھارتی نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزر نے حال ہی میں ایک ملک کا دورہ کیا، اس دورے کا ایک نکاتی ایجنڈا یہ تھا کہ پاکستان کی حمایت نہ کی جائے، جس طرح بھارت ماضی میں چین سے مایوس لوٹا اس ملک سے بھی لوٹے گا۔

شاہ محمود قریشی کا مزید کہنا تھا کہ امریکا کے ساتھ تعلقات میں بہت بہتری آئی ہے، صدر ڈونلڈٹرمپ کسی کی کال کے زیادہ منتظر ہوں گے تو وہ عمران خان کے ہوں گے، ملک میں سیاسی عدم استحکام سے معیشت کو نقصان کا خدشہ ہے۔

پاک بھارت مذاکرات کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ آئیں بائیں شائیں ہمیشہ بھارت کی جانب سے کی گئی ہے، مذاکرات کے راستے پر چلنے سے ہمیشہ بھارت نے انکار کیا،5اگست کے اقدام سے بھارت کے ساتھ مستقبل میں مذاکرات ممکن نہیں۔

بھارت سے کوئی دوست آئے گا تو ان کا احترام ضرور کیا جائے گا، میں نہیں سمجھتا کہ بھارت سے مستقبل میں کوئی مذاکرات ہوں گے،5اگست کےاقدام سے تو بھارتی عوام اور اپوزیشن بھی نالاں ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں