The news is by your side.

Advertisement

دو ایٹمی ممالک کے درمیان جنگ مشترکہ خود کشی کے مترادف ہوگی، شاہ محمود قریشی

اسلام آباد : وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ دو ایٹمی قوتوں کو جنگ سے گریز کرنا چاہیے، ایٹمی ممالک کے درمیان جنگ مشترکہ خودکشی کے مترادف ہوگی، بدقسمتی سے ہماری مذاکرات کی دعوت کو سنجیدگی سے نہیں لیا گیا۔

یہ بات انہوں نے وزارت خارجہ میں ڈپلومیٹک کور سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ متعدد بارکہہ چکے ہیں کہ دو ایٹمی قوتوں کو جنگ سے گریز کرنا چاہیے۔

ایٹمی ممالک کے درمیان جنگ مشترکہ خودکشی کے مترادف ہوگی، کشیدگی کے مضمرات پورے خطے کیلئے بڑا خطرہ ہیں۔

شاہ محمود قریشی کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان نے بھارت کے یکطرفہ اقدامات کو مسترد کردیا تھا، بدقسمتی سے ہماری مذاکرات کی دعوت کو سنجیدگی سے نہیں لیا گیا، بھارت کی مخالفت کے باوجود سلامتی کونسل کا اجلاس بلایا۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ بھارتی اقدامات ترقی کیلئے ہیں تو پھر مسلسل کرفیو نافذ کیوں رکھا گیا؟ مقبوضہ کشمیرمیں لوگوں کو زبردستی گھروں میں بند کردیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ نیویارک ٹائمز نے جو آج لکھا ہم اس کا کئی روز سے تذکرہ کررہے ہیں، ہم کرتے ہیں تو بھارت کہتا ہے کہ پروپیگنڈا کررہے ہیں، عالمی ادارے بھی آج وہی کہہ رہے ہیں جو پاکستان کافی عرصے سے کہہ رہا تھا۔

میرے بہت سے وزرائے خارجہ سے رابطے ہوئے ہیں، انہیں اندازہ ہورہا ہے کہ معاملہ ان کی سوچ سے زیادہ سنگین ہے۔ بھارت جو تاثر دینے کی کوشش کررہا ہے وہ درست نہیں۔

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ بھارت نے مقبوضہ وادی میں نسل کشی شروع کردی ہے، بھارتی چینلز پر حکومت کی جانب سے آج حملے کی چھوٹی خبریں چلوائی گئیں، ہم عالمی برادری کو مقبوضہ کشمیر کی ساری صورتحال سے آگاہ رکھنا چاہتے ہیں۔

عالمی برادری سے گزارش کروں گا کہ صورتحال انتہائی تشویشناک ہے، معاملے کا فوری نوٹس لے۔ سلامتی کونسل نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کو مسلسل دیکھ رہے ہیں، مقبوضہ وادی میں کرفیو کو18دن ہوچکے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں