خارجہ اور دفاع کے معاملے میں سیاسی اختلاف سے بالاتر ہو کر سوچنا ہوگا: وزیر خارجہ -
The news is by your side.

Advertisement

خارجہ اور دفاع کے معاملے میں سیاسی اختلاف سے بالاتر ہو کر سوچنا ہوگا: وزیر خارجہ

اسلام آباد: وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ قومی خارجہ اور دفاعی پالیسی کے معاملے میں ہم سب ایک ہیں۔ خارجہ اور دفاع کے معاملے میں ہمیں سیاسی اختلافات سے بالا تر ہو کر سوچنا ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق سینیٹ اجلاس میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ سیاسی اختلافات کے باوجود خارجہ پالیسی پر متفق ہیں۔ چیلنجز کو سامنے رکھ کر یکسوئی سے بات کریں گے تو وزن ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ کوشش کریں گے امریکا کے ساتھ تعلقات میں بہتری لائیں، یہ بھی کوشش ہوگی کہ پاکستانی عوام اور نمائندگان کی آرا کو اہمیت دیں۔

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ خارجہ پالیسی مرتب کرنے میں پارلیمنٹ سے رہنمائی لیں گے۔ قومی خارجہ اور دفاعی پالیسی کے معاملے میں ہم سب ایک ہیں۔ خارجہ اور دفاع کے معاملے میں ہمیں سیاسی اختلافات سے بالا تر ہو کر سوچنا ہوگا۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ وزیر اعظم اور امریکی وزیر خارجہ کی ٹیلی فونک گفتگو مثبت، تعمیری اور دوستانہ انداز میں ہوئی، امریکی دفتر خارجہ کی ترجمان نے جو بات کی اس کا ٹیلیفونک رابطے میں ذکر تک نہیں ہوا۔

انہوں نے مزید کہا کہ 5 ستمبر کو امریکی وزیر خارجہ کے دورہ پاکستان پر تعلقات بہتر کرنے کی کوشش کریں گے۔

سینیٹ اجلاس میں شاہ محمود قریشی نے مزید کہا کہ اقوام متحدہ کے 73 ویں اجلاس میں گستاخانہ خاکوں کے ایشو کو اٹھانے کی کوشش کروں گا۔ سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ سے بھی اس ایشو کو اٹھایا ہے۔ پی ٹی اے نے 22 ہزار 8 سو 95 سائٹس کو بلاک کیا ہے۔ سینیٹ سیف کی سربراہی میں کمیٹی قائم کی جائے تو حمایت کروں گا۔

انہوں نے کہا کہ او آئی سی کے 6 اہم ملکوں کے وزرائے خارجہ کو خطوط ارسال کر دیے ہیں۔ او آئی سی کے سیکریٹری جنرل کو بھی پاکستانی قوم کے جذبات سے آگاہ کردیا، اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کمیشن کے سامنے بھی معاملہ اٹھائیں گے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ نیدر لینڈز کےایک فرد کے عمل سے یورپ کا امن متاثر ہو سکتا ہے، افراد کی حرکتوں کے اثرات قوموں پر آتے ہیں، توہین آمیز خاکوں سے ایک ارب 70 کروڑ مسلمانوں کے جذبات مجروح ہوئے۔

انہوں نے کہا کہ نیدر لینڈز کے وزیر خارجہ آج شام فون کریں گے، ان سے اس معاملہ پر بات کروں گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں