شاہ زین قتل کیس : گواہان کو دباؤ ڈال بیان سے منحرف کرایا گیا، وکیل استغاثہ -
The news is by your side.

Advertisement

شاہ زین قتل کیس : گواہان کو دباؤ ڈال بیان سے منحرف کرایا گیا، وکیل استغاثہ

اسلام آباد : شاہ زین قتل کیس کے گواہان کو ملزمان نے دباؤ ڈال کر عدالت میں اپنے بیان سے منحرف کروایا، تفصیلات کے مطابق شاہ زین قتل کیس کی سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران وکیل استغاثہ نے انکشاف کیا ہے کہ منحرف ہونے والے گواہوں پر دباؤ ڈال کر ان سے سادہ کاغذات پر دستخط کرائے گئے۔

عدالت نے گواہان اور مدعی کو آئندہ سماعت پر طلب کر لیا، جسٹس امیر ہانی مسلم کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے زین قتل از خود کیس کی سماعت کی انسداد دہشت گردی عدالت کاریکارڈسپریم کورٹ پیش کیا گیا ۔

عدالت کے سوالات کا جواب دیتے ہوئے وکیل استغاثہ نے بتایا کہ مقدمے میں منحرف ہونے والے تمام گواہ پراپرٹی ڈیلر ہیں، دباؤ ڈال کر ان سے سادہ کاغذات پر دستخط کرائے گئے۔

عدالت نے استفسار کیا کہ کیا منحرف ہونے والے گواہوں کے خلاف کوئی مقدمہ درج کیا گیا؟جس پر آئی جی پنجاب کوئی تسلی بخش جواب نہیں دے سکے۔

تاہم عدالت نے جب یہ سوال کیا کہ مقتول کی والدہ کے میڈیا پر دیئے گئے بیانات کا جائزہ لیا گیا ہے تو آئی جی پنجاب کا کہنا تھا کہ ٹرائل کورٹ میں اس حوالے سے درخواست دی گئی تھی جو مسترد کر دی گئی ۔

عدالت کا کہنا تھا کہ ہم اس موقع پر کوئی ٹرائل پر کوئی کمنٹ نہیں کرنا چاہتے لیکن بظاہر ایسا لگتا ہے کہ مقدمے کی سماعت بہت کمزور ہوئی ہے ۔

عدالت نے مدعی ،مقتول کے قانونی ورثاء اوراستغاثہ کے گواہان کو اگلی سماعت پر طلب کر لیا،،جبکہ آئی جی پنجاب کو ہدایت کی ہے کہ ان تمام افراد کی سپریم کورٹ میں باحفاظت حاضری یقینی بنائی جائے بعد ازاں مذید سماعت سولہ نومبر تک ملتوی کر دی گئی ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں