The news is by your side.

Advertisement

زینب قتل کیس میں ملوث وزیر کا نام سپریم کورٹ کو دےدیا، شاہد مسعود

اسلام آباد: معروف صحافی ڈاکٹر شاہد مسعود نے دعویٰ کیا ہے کہ زینب کے قتل میں ملوث ملزم عمران بین الاقوامی گروہ کا حصہ ہے، میرے پاس کچھ چیزیں اور ملوث وزیر کا نام تھا جو سپریم کورٹ کو دے دیا۔

اے آر وائی ںیوزکے پروگرام آف دیکارڈ میں میزبان کاشف عباسی سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر شاہد مسعودکا کہنا تھاکہ سانحہ قصور سے متعلق میرے پاس کچھ شواہد اور نام تھے جس کی بنیاد پر ملزم پر شبہ ظاہر کیا۔

اُن کا کہنا تھا کہ قصورمیں بڑے سانحے کو دبانے کی کوشش کی جارہی ہے اس لیے حکومت نے تحقیقات کا مطالبہ سنتے ہی گھبراہٹ کا شکار ہوگئی، میرے پاس کچھ چیزیں تھیں جس کی بنیاد پر سپریم کورٹ نے میری بات سُنی۔

شاہد مسعود نے دعویٰ کیا کہ سپریم کورٹ پہنچتے ہی ایک خاتون احاطہ عدالت میں آئیں اور انہوں نے چیف جسٹس سے استدعا کی کہ جے آئی ٹی بن چکی لہذا آپ اس کیس کی سماعت نہ کریں‘۔

صحافی کا کہنا ہے کہ  ’میں نے عدالت میں کچھ شواہد دیے اور مؤقف اختیار کیا کہ ان پر تحقیقات کی جاسکتی ہیں مگر حیران کُن امر یہ ہے کہ میرے سپریم کورٹ جانے پر حکومتی صفوں میں غصہ پیدا ہوگیا اور انہوں نے میرے خلاف خبریں تیار کرلیں‘۔

ڈاکٹر شاہد مسعود نے دعویٰ کیا کہ حکومت چاہتی ہے سانحہ قصور کا معاملہ عدالت نہ جائے اور سپریم کورٹ اس کیس کی سماعت نہ کرے، وزیرقانون پنجاب سپریم کورٹ جانے پر الزام لگا رہے ہیں ‘۔

اُن کا کہنا تھا کہ ڈارک ویب کے ذریعے پاکستان سے کرپٹو کرنسی اور بٹ کوائن کے ذریعے منی لانڈرنگ کی جارہی ہے اور اس میں یہ گینگ ملوث ہے، میں نے کسی پر الزام نہیں لگایا مگر اکاؤنٹس کی تحقیقات کا مطالبہ ضرور کیا۔

ڈاکٹر شاہد مسعود نے اے آر وائی کے پروگرام آف دی ریکارڈ میں گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ ڈارک نیٹ پر منظم مافیا سرگرم ہے، آئندہ سماعت پر سپریم کورٹ میں نئی دستاویزات جمع کرواؤں گا‘۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں