The news is by your side.

Advertisement

عزیر بلوچ کو جرائم کرتے کبھی نہیں‌ دیکھا نہ ہی اُس کے منہ سے قتل کا لفظ سُنا، شرجیل میمن

کراچی: پیپلزپارٹی کے رہنم اور رکن سندھ اسمبلی شرجیل انعام میمن نے لیاری گینگ وار کے سرغنہ سے ملاقات کا اعتراف کرتے ہوئے کہا ہے کہ میں نے عزیر بلوچ کو کبھی جرائم کرتے نہیں دیکھا۔

اے آر وائی نیوز کے پروگرام الیونتھ آور میں میزبان وسیم بادامی کے ساتھ بذریعہ ویڈیو گفتگو کرتے ہوئے شرجیل انعام میمن کا کہنا تھا کہ ’عزیر بلوچ کے ذریعے خواتین کا کوئی مسئلہ حل نہیں کرایا، ایک دوست کا ٹرک چوری ہوا تھا جس کے لیے ظفر بلوچ سے رابطہ کیا، اسی طرح ایک اور عزیز کی گاڑی چوری ہوئی تب بھی ظفر بلوچ سے ہی رابطہ کیا تھا‘۔

رکن سندھ اسمبلی کا کہنا تھا کہ جرائم کےلیے عزیر بلوچ سے کسی پیپلزپارٹی رہنما نے رابطہ نہیں کیا، لیاری میں پیپلزپارٹی نےامن قائم کرنےکیلئے سب سے پہلے بات کی، لیاری میں مختلف گروپس تھے اور وہاں پیپلزپارٹی کے کارکنوں کو چُن چُن کر قتل کیا جارہا تھا۔

لیاری گینگ وار کے سرغنہ سے ملاقات کا اعتراف کرتے ہوئے شرجیل میمن کا کہنا تھا کہ ’لیاری گینگ وار اور کچھی رابطہ کمیٹی کے درمیان ہونے والے تنازع کو حل کرانے کے دوران کے آر سی کے دفتر میں ہی ایک بار عزیربلوچ سے ملاقات ہوئی تھی۔

مزید پڑھیں: میں نے کوئی قتل نہیں کیا، بے گناہ ہوں، عزیر بلوچ کا اہم بیان سامنے آگیا

یہ بھی پڑھیں: قتل اور اغوا ، عزیر بلوچ پر مزید 8 مقدمات میں فرد جرم عائد ہونے کا امکان

میزبان وسیم بادامی نے پی پی رہنما سے سوال کیا کہ ’ آپ عزیربلوچ کو کرمنل (جرائم پیشہ) سمجھتےہیں یا نہیں؟ اس پر شرجیل میمن کا کہنا تھا کہ میں نے عزیر کو کبھی اپنی آنکھوں سے جرائم کرتے نہیں دیکھا، عزیر بلوچ کے کسی جرم کا عینی شاہد نہیں ہوں‘۔

اُن کا مزید کہنا تھا کہ امن کمیٹی نےکبھی لوگوں کو مار کر اس کی ذمہ داری قبول نہیں کی اور نہ ہی عزیربلوچ نے میرے سامنےکبھی لوگوں کو قتل کرنے کا کہا، حتی کہ ذوالفقار مرزا عزیر کے قریبی تھے لیکن اُن کے منہ سے بھی کبھی نہیں سنا کہ اُس نے لوگ مروائے ہوں۔

شرجیل میمن کا کہنا تھا کہ سانحہ بلدیہ فیکٹری میں ایم کیو ایم کے ملوث ہونے کا یقین نہیں البتہ سانحہ 12 مئی میں ایم کیو ایم کا کردار ضرور ہے کیونکہ انہوں نے لوگوں کو آنے کی اجازت دی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں