site
stats
پاکستان

اے ڈی خواجہ کونہ ہٹانے کا حکم برقرار

کراچی : سندھ ہائیکورٹ نے آئی جی سندھ کو عہدے سے ہٹانے کے خلاف حکم امتناع میں توسیع کردی اور کہا کہ اے ڈی خواجہ بطور آئی جی سندھ کام جاری رکھیں گے۔

آئی جی سندھ کی برطرفی سے متعلق سندھ ہائی کورٹ میں سماعت ہوئی، سماعت میں عدالت نے اے ڈی خواجہ کو عہدے سے نہ ہٹانے کا حکم برقرار رکھا، عدالت نے ایڈووکیٹ جنرل کو ہدایت کی کہ وہ آئی جی کی تقرری کیلئے نام ارسال کرنے متعلق قوانین پر عدالت کو مطمئن کریں ، افسران کی تقرری و تبادلے کے حوالے سے تفصیلی دلائل کی تیاری کرکے آئیں۔

درخواست گزار کے وکیل فیصل صدیقی نے دلائل دیتے ہوئے کہنا تھا کہ اٹھارہویں ترمیم کے بعد اختیارات کی تقسیم اور نئےقوانین کاجائزہ ضروری ہے۔

عدالت نے فریقین کو سُننے کے بعد حکم امتناع میں توسیع کرتے ہوئے مزید سماعت تیرہ اپریل تک ملتوی کردی اور آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کو عہدے سے نہ ہٹانے کا حکم بھی برقراررکھا۔


مزید پڑھیں : قائم مقام آئی جی سندھ کا نوٹی فیکیشن معطل‘ عدالت کی اے ڈی خواجہ کو کام جاری رکھنے کی ہدایت


یاد رہے کہ گذشتہ سماعت میں سندھ ہائیکورٹ نے آئی جی سندھ کے لئے اے ڈی خواجہ کو بحال کردیا اور سردار عبدالمجید دستی کو فوری چارج چھوڑنے کا حکم دیا تھا۔

خیال رہے سندھ حکومت نے آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کی خدمات وفاق کے حوالے کر دی تھیں اور ان کی جگہ اے آئی جی سندھ عبدالمجید دستی کو عارضی طور پر نیا آئی جی سندھ مقرر کیا تھا۔

واضح رہے کہ 19 دسمبر کو اے ڈی خواجہ رخصت پر چلے گئے تھے، ان کی جگہ کراچی پولیس چیف مشتاق مہر کو آئی جی سندھ کا اضافی چارج دے دیا گیا تھا، جس کے بعد سندھ اور وفاقی حکومت کے درمیان اختلافات کی خبریں گردش کرنے لگیں اور ساتھ ہی یہ تاثر ابھرنے لگا کہ آئی جی اے ڈی خواجہ اور سندھ حکومت کے درمیان بعض معاملات پر اختلافات پائے جاتے تھے، جس کے باعث انہیں جبری رخصت پر بھیج دیاگیا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top