site
stats
پاکستان

سانحہ صفورہ‘ سبین محمود کیس: فریقین کو دوبارہ نوٹس جاری

کراچی:سندھ ہا ئیکورٹ میں سانحہ صفورا اور سبین محمود حملہ کیس میں ملوث مجرم عبدالسلام کے اہل خانہ کی سزائے موت کے خلاف اپیل پر سماعت کی گئی.

 تفصیلات کے مطابق سندھ ہائیکورٹ میں سانحہ صفورہ اورسبین محمود حملہ کیس کی سماعت ہوئی، مجرم عبدالسلام کے اہل خانہ کی جانب سے سزائے موت کے خلاف اپیل کی سماعت کی گئی۔ دوران سماعت وفاق صوبائی حکومت، اٹارنی جنرل اور دیگر کو ازسر نونوٹس جاری کیے گئے.

مزید پڑھیں: سانحہ صفورہ: گرفتار ملزمان سبین محمود کے بھی قاتل نکلے

عدالت نے فریقین کو 14مارچ تک جواب داخل کرانے کا حکم دیا.

درخواست گزار کا کہنا ہے کہ 28 دسمبر 2016 کو فوجی عدالت کی سزا کا معلوم ہوا ہے، بتایا گیا کہ عبد السلام کوموت کی سزا سنائی گئی ہے، ملزم کو صفائی کا موقع اور شفاف ٹرائل کیاجائے. دوسری جانب مجرم عبدالسلام کی والدہ نے کہا کہ میرا بیٹا جنوری 2016سے لاپتہ تھا.

مزید پڑھیں:سانحہ صفورا:سزائےموت پانےوالوں کےمقدمات کی دوبارہ سماعت

یاد رہے چند روز قبل انسداد دہشت گردی کی عدالت میں سانحہ صفورا میں سزائے موت پانے والوں کے مقدمات کی سماعت دوبارہ شروع کردی گئی تھی.

گذشتہ سال سانحہ صفورا اور سبین محمود قتل کیس کے پانچ مجرموں کو پھانسی کی سزا کی میں سابق آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے توثیق کی تھی۔ پانچوں دہشت گردوں پر مقدمہ فوجی عدالتوں میں چلایا گیا تھا۔ آئی ایس پی آر کے مطابق، سابق جنرل راحیل شریف نے سانحہ صفورا اور سبین محمود کے قتل کے پانچ مجرموں کو سزائے موت کی توثیق کی تھی ۔ پھانسی کی سزا پانے والے دہشت گردوں میں طاہر حسین منہاس، سعد عزیز، اسدالرحمن، حافظ ناصر، محمد اظہر عشرت شامل تھے۔ پانچوں دہشت گردوں کا تعلق القاعدہ کے ساتھ بتا یا جاتا ہے.

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top