The news is by your side.

سندھ ہائی کورٹ نے 2005 سے فیس بڑھانے والے اسکولوں کی تفصیل طلب کرلی

کراچی : اسکول فیس میں پانچ فیصد سے زائد اضافے سے متعلق کیس میں سندھ ہائی کورٹ نے دو ہزار پانچ سے حکومتی منظوری کے بغیر فیس بڑھانے والے اسکولوں کی تفصیل طلب کرلی، عدالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا اسکول کھولنے کے بعد فیسوں میں مزید اضافہ کردیا گیا، عدالتی احکامات کا مذاق مت بنائیں، اپنےحکم پرعمل درآمد یقینی بنانا چاہتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سندھ ہائی کورٹ میں اسکول فیسز میں پانچ فیصد سے زائد اضافے کے خلاف توہین عدالت درخواست پر سماعت ہوئی ، ڈی جی پرائیویٹ اسکولز ڈاکٹرمنصوب صدیقی عدالت میں پیش ہوئے۔

ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے کہا توہین عدالت کی درخواست کی کاپی نہیں ملی، عدالتی حکم پرعمل درآمدرپورٹ جمع کرادی ہے، جس پر عدالت نے ریمارکس میں کہا درخواست کی کاپی کیاگھرپرجاکردیں گے؟ پرانے ریٹس پر فیسوں کے چالان ایشو کریں۔

جسٹس عقیل احمد نے استفسار کیا سپریم کورٹ میں سماعت اورحکم امتناع سےمتعلق پوچھاتھا، لوگ پریشان ہیں،عدالتی حکم پرعمل کابتائیں، سماعت مزیدملتوی کریں گےتولوگ مزیدپریشان ہوں گے۔

عدالت نے مزید کہا اسکول کھولنے کے بعد فیسوں میں مزیداضافہ کردیا، عدالتی احکامات کا مذاق مت بنائیں، جس پروکیل فاؤنڈیشن اسکول نے بتایا 5فیصد سےزیادہ فیس میں اضافہ نہیں کیا، اسکول مالکان عدالتی حکم پر بالکل عمل درآمدنہیں کررہے، جسٹس عقیل احمدعباسی نے کہا عدالت کو معاملات کا پتہ ہوتا ہے، جواضافی اسکول فیس لے گئی وہ ایڈجسٹ کرنےکا کہا ہے۔

بیکن ہاؤس اور سٹی اسکول کے وکیل عدالت میں پیش ہوئے ، جسٹس محمدعلی مظہر نے ریمارکس دیئے کہ آپ چاہتےہیں عدالت فردجرم عائدکرے، آپ اپنی درخواست واپس لیں۔

ڈی جی پرائیویٹ اسکول سےمکالمہ میں کہا ہم نے درخواست دی کہ ہم والدین کوکہیں فیس جمع کرائیں؟ آپ نےکہاریکارڈبارش میں خراب ہوگیا،اپنے حکم پر عمل درآمد یقینی بنانا چاہتے ہیں۔

سندھ ہائی کورٹ نے ڈی جی پرائیویٹ اسکول سے2005 سے فیس میں اضافے کی تفصیلات طلب کرتے ہوئے کہا سندھ حکومت کی بغیرمنظوری فیس بڑھانے والوں کی تفصیلات دیں۔

درخواست گزار نے کہا اسکول والے2 سے 3 ماہ کی فیسیں ایک ساتھ لے لیتے ہیں، جس پر اسکول مالکان کا کہنا تھا کہ اضافی فیس سپریم کورٹ رجسٹرار کے پاس جمع کرانے کا حکم دیا ہے۔

بعد ازاں عدالت نے کیس کی مزید سماعت 3 دسمبر تک ملتوی کردی۔

یاد رہے گذشتہ سماعت میں سندھ ہائی کورٹ نے ڈی جی پرائیویٹ اسکولز سمیت 4 اسکولوں کوتوہین عدالت کے نوٹس جاری کئے تھے ، عدالت نے تمام اسکولوں کو حکم نامے پر مکمل عمل کرنے کا حکم دیتے ہوئے سندھ حکومت سےفیس اسٹرکچر کاریکارڈ بھی مانگا تھا۔

واضح رہے یاد رہے کہ 3 ستمبرکو سندھ ہائی کورٹ کی جانب سے جاری فیصلے میں کہا گیا تھا کہ نجی اسکولوں کو 5 فیصد سے زیادہ فیس بڑھانے کا اختیار نہیں ہے، عدالت نے نجی اسکولوں کو 5 فیصد سے زائد فیس وصولی سے روک دیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں