The news is by your side.

Advertisement

شجاع خانزادہ خودکش حملہ کیس فوجی عدالت میں منتقل کر دیا گیا

راولپنڈی: نیشنل ایکشن پلان کے تحت شجاع خانزادہ خودکش حملہ کیس اے ٹی سی سے فوجی عدالت میں منتقل کر دیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق 2015 میں ہونے والے ایک خود کش حملے میں سابق وزیر داخلہ پنجاب شجاع خانزادہ ہلاک ہوئے تھے جس کے بعد سیکیورٹی حکام کی جانب سے تحقیقات کا آغاز کیا گیا تھا۔

قبل ازیں شجاع خانزادہ حملہ کیس کی سماعت انسداد دہشت گردی کی عدالت میں ہوا کرتی تھی جبکہ نیشل ایکش پلان کے تحت اب کیس ملٹری کورٹ میں منتقل کیا گیا ہے۔


راولپنڈی:شجاع خانزادہ حملے میں ملوث ملزم کا 14روزہ جسمانی ریمانڈ


شجاع خانزادہ اگست 2015 میں اٹک خودکش حملے میں جاں بحق ہوئے تھے، اس وقت وہ وزیر داخلہ پنجاب تھے، سی ٹی ڈی نے کیس میں ایک ملزم قاسم معاویہ کو گرفتار بھی کیا تھا۔

مذکورہ کیس تین سال اے ٹی سی میں چلتا رہا، خیال رہے کہ وزیر داخلہ پنجاب کرنل (ر) شجاع خانزادہ اٹک کے علاقے شادی خان میں اپنے ڈیرے پر موجود تھے جہاں ایک خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکہ خیز مواد سے اڑالیا، جس کے نتیجے میں وزیر داخلہ اور ایک ڈی ایس پی سمیت 19افراد شہید جبکہ متعدد زخمی ہوئے تھے۔


شجاع خانزادہ پرخودکش حملے کی تفتیش مکمل ہوگئی


صوبائی وزیر داخلہ بہنوئی کے انتقال پر تعزیت کے لیے آئے لوگوں سے ملاقات کررہے تھے کہ خودکش دھماکہ ہوگیا، دھماکا اتنا طاقتور تھا کہ کنکریٹ سے بنی ڈیرے کی پچاس بائی پچاس فٹ کی چھت لمحہ بھر میں زمین بوس ہوگئی تھی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں