site
stats
عالمی خبریں

پاکستان آنے کی اجازت نہ ملنے پر سکھ یاتریوں کا مودی سرکار کے خلاف احتجاج

نئی دہلی: بھارتی حکومت نے سکھ یاتریوں کو پاکستان آنے کی اجازت دینے سے انکار کر دیا۔ سکھ یاتری رنجیت سنگھ کی برسی کی تقریبات میں شرکت نہیں کر پائیں گے۔

پاکستان کے شہر لاہور میں مہاراجہ رنجیت سنگھ کی برسی کی تقریبات میں ہر سال ہندوستان سے سکھ یاتری شرکت کرتے ہیں تاہم اس بار انتہا پسند مودی سرکار نے انہیں پاکستان آنے کی اجازت دینے سے انکار کردیا۔

مودی سرکار کے متعصبانہ رویے پر سکھ یاتری اپنی ہی حکومت کے خلاف سراپا احتجاج بن گئے۔

پاکستان آنے کے خواہش مند سکھ یاتریوں نے اٹاری ریلوے اسٹیشن پر شدید احتجاج کرتے ہوئے مودی حکومت کے خلاف نعرہ بازی بھی کی۔

یاتریوں کا کہنا تھا کہ ہر سال انہیں پاکستان میں خصوصی سیکیورٹی فراہم کی جاتی ہے۔ مودی حکومت کا یہ اقدام صرف انتہا پسندی پر مبنی ہے۔

مودی سرکار نے پاکستان کی جانب سے سکھ یاتریوں کو لینے کے لیے بھارت جانے والی خصوصی ٹرین کو بھی داخلے کی اجازت نہ دی۔

پاکستانی ہائی کمیشن کا 300 یاتریوں کے لیے ویزا

مودی سرکار کے اس انتہا پسندانہ اقدام کو وزارت خارجہ نے افسوسناک قرار دیا۔

اسلام آباد میں ترجمان دفتر خارجہ نفیس زکریا کی جانب سے جاری کیے گئے بیان میں کہا گیا کہ نئی دہلی میں پاکستانی ہائی کمیشن نے 300سکھ یاتریوں کو ویزے جاری کیے تاہم بھارتی حکومت نے انہیں عین موقع پر روک دیا۔

ترجمان کے مطابق 150 سکھ یاتری صبح سےاٹاری پر بھارتی اجازت کے منتظر ہیں۔ اس سے قبل بھارت نے جور میلے میں بھی یاتریوں کو شرکت کی اجازت نہیں دی تھی۔

بیان میں کہا گیا کہ پاکستان نے سکھ یاتریوں کے لیے ٹرین بھیجی، لیکن بھارت نے انکار کردیا۔ دونوں ممالک کے درمیان معاہدے کے تحت رسومات کے لیے آنے والوں کو سہولت فراہم کرنا باہمی ذمے داری ہے۔

ترجمان نے امید ظاہر کی کہ بھارتی حکومت اس معاملے میں مؤثر اقدامات کرے گی اور معاملے کو سلجھائے گی۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top