The news is by your side.

Advertisement

سندھ حکومت کو ایک اور دھچکا، عدالت نے بھی پولیس افسران کے تبادلے کالعدم قرار دے دیے

کراچی: عدالت نے سندھ پولیس کے دو افسران کے تبادلے کالعدم قرار دے دیے ہیں جو سندھ حکومت کے لیے ایک اور دھچکا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سندھ ہائی کورٹ نے ایس پی ڈاکٹر رضوان اور ڈی آئی جی خادم حسین کے تبادلے کا نوٹیفکیشن کالعدم قرار دے دیا، درخواست پر فیصلہ سناتے ہوئے عدالت نے کہا کہ دونوں افسران کا تبادلہ غیر قانونی ہے۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا کہ پولیس افسران کے تبادلے کے طریقہ کار پر عمل نہیں کیا گیا، سندھ حکومت آئی جی کی مشاورت کے بغیر افسران کے تبادلے نہیں کر سکتی، ڈی آئی جی خادم حسین اور ایس پی ڈاکٹر رضوان کا تبادلہ غیر قانونی ہے۔

یاد رہے کہ عدالت نے گزشتہ سماعت پر دونوں افسران کے تبادلوں کا نوٹیفکیشن معطل کر دیا تھا، افسران کی معطلی کے خلاف دائر درخواست میں کہا گیا تھا کہ حالیہ دنوں میں 80 پولیس افسران کے تبادلے کیے جا چکے ہیں، سندھ حکومت نے اپنے ہی قوانین کی خلاف ورزی کی۔

وزیراعظم عمران خان کی آج آئی جی سندھ کلیم امام سے اہم ملاقات ہوگی

درخواست میں کہا گیا تھا کہ ڈی آئی جی خادم حسین کا تبادلہ آئی جی کے علم میں لائے بغیر کیا گیا، ضابطے کے مطابق ڈی آئی جی کے تبادلے کے لیے آئی جی سے مشاورت لازمی ہے۔

خیال رہے کہ وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے آئی جی سندھ ڈاکٹر کلیم امام کی تبدیلی کے لیے رضا مندی ظاہر کی جا چکی ہے، نئے آئی جی کے انتخاب کے سلسلے میں وفاق اور صوبائی حکومت کے درمیان بات چیت جاری ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں