site
stats
پاکستان

اپیکس کمیٹی کا اجلاس: نیشنل ایکشن پلان کے عملدر آمد پر اظہار اطمینان

سندھ اپیکس کمیٹی کا اجلاس وزیر اعلیٰ سندھ کی زیر صدارت ہوا۔ اجلاس میں کراچی آپریشن کو مزید موثر اور تیز کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔

کراچی: سندھ اپیکس کمیٹی کا اٹھارہواں اجلاس ہوا۔ اجلاس میں کراچی آپریشن کو مزید مؤثر اور تیز کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق سندھ اپیکس کمیٹی کا اجلاس وزیر اعلیٰ سندھ کی زیر صدارت ہوا۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ سید مراد علی شاہ نے نیشنل ایکشن پلان پر عملدر آمد پر اطمینان کا اظہار کیا۔

وزیر اعلیٰ سندھ کا کہنا تھا کہ سندھ واحد صوبہ ہے جس نے نیشنل ایکشن پلان پر سب سے زیادہ عملدر آمد کیا۔ اجلاس میں کراچی آپریشن کو مزید مؤثر اور تیز کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔

اس سے قبل چیف سیکریٹری سندھ نے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ 16 دہشت گردوں کو پھانسی دی جاچکی ہے جبکہ 19 کیسز ملٹری کورٹس میں چل رہے ہیں۔

چیف سیکریٹری سندھ نے بتایا کہ سندھ کی لیگل کمیٹی نے 9 مزید کیسز ملٹری کورٹس کے لیے کلیئر کیے ہیں۔

اجلاس میں چیف سیکریٹری سندھ رضوان میمن کے علاوہ نئے کور کمانڈر کراچی، نئے ڈی جی رینجرز سندھ، آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ، سینیئر وزیر نثار کھوڑو، مولا بخش چانڈیو اور دیگر شریک ہوئے۔

:مشیر اطلاعات کی میڈیا سے گفتگو

اجلاس کے بعد مشیراطلاعات سندھ مولا بخش چانڈیو نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نیشنل ایکشن پلان پر وفاق اپنی ذمہ داری پوری نہیں کر رہا۔ وفاقی وزیر داخلہ کہاں گئے وہ کیا کر رہے ہیں۔

مولا بخش چانڈیو کا کہنا تھا کہ آج کا اجلاس خوشگوار انداز میں ہوا، امن امان سے متعلق بہتر نتائج آئے ہیں تاہم وزیر اعلیٰ نے تحفظات کا اظہار کیا ہے کہ وفاق نیپ پر اپنی ذمہ داری پوری نہیں کر رہا۔

مشیر اطلاعات نے کہا کہ کالعدم تنظیموں سے متعلق وفاق کی کوئی واضح پالیسی نہیں۔ انہوں نے سوال کیا کہ وفاق نے مدارس اصلاحات کے حوالے سے کیا کیا؟ اس حوالے سے وفاق کچھ بھی نہیں بتاتا۔

مولا بخش چانڈیو کا کہنا تھا کہ تمام اداروں نے امن و امان کی بحالی میں کردار ادا کیا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top