سندھ اسمبلی: احتساب ایجنسی بنانے کے لیے بل پیش کردیا گیا accountability bill 2017
The news is by your side.

Advertisement

سندھ اسمبلی: احتساب ایجنسی بنانے کے لیے بل پیش

کراچی: سندھ میں احتساب کی غرض سے نیا ادارہ بنانے کے لیے اسمبلی میں احتساب بل 2017ء پیش کردیا گیا، بل کی منظوری کی صورت میں محکمہ اینٹی کرپشن کے ملازمین احتساب ایجنسی میں ضم ہوجائیں گے۔

تفصیلات کے مطابق سندھ اسمبلی میں سندھ احتساب بل 2017  پیش کردیا گیا جس کے مطابق صوبائی احتساب ایجنسی کے نام سے نیا ادارہ بنایا جائے گا۔

بل کے مطابق احتساب بل سندھ کے تحت احتساب کمیشن تشکیل دیا جائے گا، سندھ احتساب ایجنسی کا سربراہ کمیشن کا چیئرمین ہوگا، ایڈووکیٹ جنرل،پراسیکیوٹر،ڈی جی احتساب ایجنسی اس کے ممبر ہوں گے، احتساب ایجنسی کے چیئرمین کی تقرری پارلیمانی کمیٹی کرے گی،پارلیمانی کمیٹی کے سربراہ اسپیکر سندھ اسمبلی ہوں گے۔

متن کے مطابق مشاورت سے 3 ارکان اس کمیٹی کے ممبر مقرر کیے جائیں گے،احتساب ایجنسی کا چیئرمین ریٹائرڈ جج یا 21 گریڈ کا افسر ہوگا، نئے قانون کے تحت سندھ میں احتساب عدالتیں بنائی جائیں گی، ججز ہائیکورٹ کے چیف جسٹس کی مشاورت سے تعینات ہوں گے۔

احتساب ایجنسی عوامی نمائندوں اور افسران کے خلاف کارروائی کرسکے گی، بدعنوانی ثابت ہونے پر 5 سے 7 سال سزا اور جائیداد ضبط کی جاسکے گی ، بل کی منظوری کے بعد اینٹی کرپشن،ملازمین احتساب ایجنسی میں ضم ہوں گے۔

امکان ہے کہ بدھ کے روز احتساب بل پر سندھ اسمبلی میں بحث کی جائے گی۔

دریں اثنا سندھ اسمبلی کے اجلاس میں گورنر کے اعتراض کردہ دوسرے بل پر بھی ارکان اسمبلی نے اعتراضات مسترد کردیے گئے۔

گورنر سندھ محمد زیبر عمر نے نیو پاور پلانٹ سبسڈی سے متعلق بل پر بھی اعتراض کیا تھا، نیو پاور پلانٹ سبسڈی سے متعلق بل دوبارہ بحث اور منظوری کے لیے پیش کردیا گیا۔

خیال رہے کہ سندھ اسمبلی نے 3 جولائی کو نیب آرڈیننس کی منسوخی کا بل منظور کیا ہے اور اب یہ احتساب کا نیا ادارہ قائم کرنے جارہی ہے تاہم نیب آرڈیننس منسوخی کا بل جب گورنر سندھ کے پاس پہنچا تو انہوں نے اسے ایکٹ بنانے سے انکار کرتے ہوئے مسودے پر دستخط کرنے سے انکار کردیا اور بل کو دوبارہ بحث کے لیے اسمبلی بھیج دیا۔


سندھ اسمبلی: نیب آرڈیننس منسوخی کا بل منظور، اپوزیشن کا احتجاج


خیال رہے کہ نیب آرڈیننس منسوخی کا اپوزیشن ارکان کے احتجاج کے باوجود کثرت رائے سے منظور ہوگیا تھا لیکن ابھی یہ بل ایکٹ نہیں بل سکا اور اب ارکان اسمبلی نے احتساب کے لیے نیا ادارہ قائم کرنے کا بل پیش کردیا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں