The news is by your side.

Advertisement

سندھ اسمبلی میں پی ٹی آئی ارکان کی پٹائی، پیپلز پارٹی کا ردِ عمل

کراچی: وزیر اطلاعات سندھ ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ جس طرح کریم گبول کو لے جایا گیا وہ سب کے سامنے ہے، اسمبلی میں پی ٹی آئی کے دیگر ممبران کا رویہ بھی سامنے ہے، انتہائی نا خوش گوار واقعہ پیش آیا جو نہیں ہونا چاہیے تھا، اس کے لیے اسپیکر صاحب ضرور کوئی ایکشن لیں گے۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ناصر حسین نے کہا کہ ہم پر الزام لگایا گیا کہ پی ٹی آئی ارکان کو اغوا کیا جا رہا ہے، اگر اس طرح کی کوئی بات ہوتی تو یہ ارکان منظر عام پر کیوں آتے، یہ قدم پی ٹی آئی کے تینوں ارکان نے خود اٹھایا اور پارٹی سے ناراضی کا اظہار کیا۔

انھوں نے کہا تینوں اراکین اپنی مرضی سے ایک ساتھ گاڑی میں اسمبلی میں آئے، کریم گبول کا معاملہ پلانٹڈ تھا یا کوئی معاملہ ہے، کریم گبول نے جب کہا میں پی ٹی آئی والوں کے ساتھ جانا چاہتا ہوں تو ہم پیچھے ہٹ گئے۔

سندھ اسمبلی اجلاس: پی ٹی آئی ارکان نے اپنے ناراض ارکان کی پٹائی کردی

ناصر شاہ کا کہنا تھا کریم گبول نے خود کل ویڈیو بیان میں پارٹی سے ناراضی کا اظہار کیا، مزید 2 ممبران شہریار شر اور اسلم ابڑو نے بھی ناراضی کا اظہار کیا، ان کی شکایت غلط ٹکٹس پر تھی، ان کے اپنے ایم پی ایز نے بھی کہا ہم ووٹ نہیں دیں گے بائیکاٹ کریں گے، ہر جگہ ان کے اپنے لوگ پالیسی سے تنگ یا ناراض ہیں۔

سندھ اسمبلی میں ہنگامہ آرائی پر وزیر پارلیمانی امور سندھ مکیش چاؤلہ نے میڈیا سے گفتگو میں کہا پی ٹی آئی والے کسی رکن کو زد و کوب کر رہے تھے، ہم نے بیچ بچاؤ کے لیے اپنا فرض ادا کیا، میرا پاؤں بیچ بچاؤ میں زخمی بھی ہوا، کوئی رکن اپنے ضمیر کی آواز پر ووٹ کرتا ہے تو اسے کرنے دیں۔

مکیش چاؤلہ نے کہا اغوا کس نے کس کو کیا سب سامنے آ گیا، کریم گبول کو کون لے گیا ہے یہ ویڈیوز میں ظاہر ہوگیا ہے، ایوان کی صورت حال پر قانونی کارروائی کا اختیار اسپیکر کو ہے اور وہ کریں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں