The news is by your side.

Advertisement

تیز برسات کا امکان ،کراچی کے بڑے نالوں کی فوری صفائی کرنے کا فیصلہ

کراچی : سندھ حکومت نےکراچی کے بڑے نالوں کی فوری صفائی کرنے کا فیصلہ کرلیا ، مرادعلی شاہ کا کہنا تھا کہ موسمی تبدیلی کےباعث تیز برسات  کا امکان ہے، تمام نالوں کی صفائی کا کام فوری کیا جائے۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کی زیرصدارت مون سون کی تیاری سےمتعلق اجلاس ہوا، جس میں وزیراعلیٰ سندھ نے کراچی، حیدرآباد اوردیگر شہروں کےندی نالوں کی صفائی کی ہدایت کردی۔

اجلاس میں کراچی کے بڑے نالوں کی فوری صفائی کرنے کا فیصلہ کیا گیا اورواٹربورڈ کو نکاسی آب کیلئے انڈرگراؤنڈ سسٹم ٹھیک کرنے کی بھی ہدایت کردی۔

مرادعلی شاہ کا کہنا تھا کہ موسمی تبدیلی کےباعث تیزبرسات کا امکان ہے، تمام نالوں کی صفائی کا کام فوری کیا جائے۔

مزید پڑھیں : کراچی میں اربن فلڈ کا خدشہ ، نالوں کی صفائی کیلیے فنڈز کے اجرا کا مطالبہ

یاد رہے کراچی میں اربن فلڈ کے خدشے کے پیش ںظر چیئرمین شرقی نے وزیربلدیات،کمشنر،چیف سیکریٹری،سیکریٹری فنانس کو خط لکھا تھا ، جس میں مون سون بارشوں سےپہلےنالوں کی صفائی کےلیے فنڈز کے اجرا کا مطالبہ کیا تھا۔

خط میں کہا گیا کہ فوری 6کروڑ50لاکھ کی خصوصی گرانٹ فراہم کی جائے، ضلع شرقی میں گلشن اقبال اورجمشیدٹاؤن میں نالوں کی ابترصورتحال ہے، نالےصاف نہ ہوئےتوآس پاس کی آبادی زیرآب آسکتی ہے۔

اس سے قبل ندی نالوں کی صفائی کیلئے فنڈز، افرادی قوت اور مشینری کی عدم دستیابی پر بلدیاتی نمائندوں نے پیپلزپارٹی کی حکومت پر سوالات اٹھائے تھے جبکہ چار اضلاع کے چیئرمینز نے بروقت انتظامات کے لیے تعاون نہ کرنے پر کراچی کو ناقابل تلافی نقصان پہنچنے کا عندیہ دیا تھا۔

ڈسٹرکٹ چئیرمینز نے مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا تھا کہ وزیر اعلیٰ اور وزیر بلدیات اس معاملے میں سنجیدگی کا مظاہرہ نہیں کررہے، اربن فلڈنگ کے خدشے کے پیش نظر کرائے کی مشینیں لے کر کام کرنے پر مجبور ہیں، سندھ حکومت بلدیاتی نمائندوں اور عوام کو میٹھی گولی دے کر تسلی دینے کی کوشش کررہی ہے۔

بلدیاتی نمائندوں کا کہنا تھا کہ بروقت انتظامات نہ ہونے پر ایک بار پھر کراچی کی سڑکیں اور انڈر پاسسز ڈوبنے، املاک کو نقصان اور برساتی نالے اوور بھرنے کا خدشہ ہے۔ بلدیاتی قیادت نے فوری فنڈز جاری کرنے اور کے الیکٹرک کے کھلے تاروں کی مرمت کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

میئرکراچی وسیم اختر کا کہنا تھا کہ’کراچی کے ندی نالوں کی صفائی آخری بار 2018 میں ہوئی، جس کےبعد ہم نے متعدد بار وزیراعلیٰ سے درخواست کی کہ وہ صفائی کے لیے فنڈز جاری کریں، کراچی میونسپل کارپوریشن کے پاس اتنے وسائل یا پیسے نہیں کہ ہم خود صفائی کا کام کرسکیں‘۔

Comments

یہ بھی پڑھیں