The news is by your side.

Advertisement

سندھ پولیس میں کروڑوں روپے کرپشن کیس، سابق اے آئی جی کی سزا معطل

کراچی: سندھ ہائیکورٹ میں محکمہ پولیس میں کروڑوں روپے فراڈ کے کیس سے متعلق سماعت ہوئی، عدالت نے سابق اے آئی جی تنویراحمدطاہر کو بری کرنے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق سندھ ہائیکورٹ نے سابق اے آئی جی تنویراحمدطاہر کی سزا کالعدم قرار دے دی جبکہ سابق اے آئی جی فداشاہ کو بری کرنے کے خلاف چیئرمین نیب کی اپیل مسترد کردی۔

سندھ ہائیکورٹ میں تنویراحمدطاہر کی سزا کے خلاف اپیل کی سماعت ہوئی، دوران سماعت عدالت نے سابق اے آئی جی تنویراحمدطاہر کی سزا کالعدم قرار دے کر بری کرنے کا حکم دے دیا۔

جبکہ سابق اے آئی جی فداشاہ کو بری کرنے کے خلاف چیئرمین نیب کی اپیل مسترد ہوگئی، عدالت نے فداشاہ سے متعلق احتساب عدالت کے فیصلے کو درست قرار دے دیا، خیال رہے کہ احتساب عدالت نے سابق اے آئی جی فداشاہ کو بری کردیا تھا۔

محکمہ پولیس سندھ میں بڑے پیمانے پر کرپشن کا کیس سامنے آگیا

احتساب عدالت نے تنویر احمد طاہر کو 10 سال قیدکی سزا سنائی تھی، دونوں افسران پر پیٹرول اور سی این جی کے جعلی بل بنانے کے الزامات تھے۔

یاد رہے کہ گزشتہ سال ستمبر میں محکمہ داخلہ سندھ نے سپریم کورٹ میں ایک رپورٹ جمع کروائی تھی جس میں انکشاف کیا گیا تھا کہ سندھ پولیس کے 12 ہزار افسران اور اہلکار جرائم میں ملوث ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں