The news is by your side.

Advertisement

پولیس اہلکاروں کی بھرتیوں میں بد عنوانی، آئی جی سندھ کی عدالت میں طلبی

اسلام آباد : چیف جسٹس آف سپریم کورٹ جناب جسٹس جواد ایس خواجہ نے سندھ پولیس میں بھرتی میں بڑی کرپشن کا ازخود نوٹس لے لیا۔

سندھ پولیس میں غیر قانونی بھرتیوں کے ذریعے بیس ارب روپے کی کرپشن کی خبر پر آئی جی سندھ کو عدالت میں طلب کرلیا ہے.

واضح رہے کہ سال دوہزار آٹھ کے دوران سندھ میں کی جانے والی پولیس اہلکاروں کی بھرتیوں میں دل کھول کر کرپشن کا بازار گرم کیا گیا.

خبر کے مطابق ہر عہدے کے الگ الگ ریٹ لگے اور افسران نے کھل کر کرپشن کا کھیل کھیلا لیکن بکرے کی ماں کب تک خیر مناتی، آخر کار چیف جسٹس جواد ایس خواجہ نے مذکورہ کرپشن کا نوٹس لے کر آئی جی سندھ کو طلب کرلیا۔

انہوں نے آئی جی سندھ کو اکتیس اگست کے روز سپریم کورٹ میں پیش ہونے کا حکم دے دیا ہے، آئی جی سندھ کو جاری کئے نوٹس میں انہیں اس الزام کی تفصیلی وضاحت کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔

اجری کئے گئے نوٹس کے مطابق سندھ پولیس میں دو ہزار آٹھ سو اہلکاروں سے رشوت وصول کی گئی جس کا حجم تین ارب روپے ہے اس ضمن میں متاثرہ امیدواروں نے سندھ ہائی کورٹ سے رجوع کیا تھا۔

چیف جسٹس نے یہ اقدام میڈیا کی ایک خبر کا نوٹس لیتے ہوئے کیا ہے جس میں پولیس کی کرپشن سے نقاب اٹھایا گیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں