The news is by your side.

Advertisement

سندھ میں رینجرز کے اختیارات میں توسیع کا فیصلہ

کراچی : سندھ میں رینجرز کے اختیارات میں توسیع کا فیصلہ کرلیا گیا ہے، آصف زرداری نے رینجرز کو فوری اختیارات دینے کیلئے سندھ حکومت کو ہدایت کردی۔

تفصیلات کے مطابق سندھ میں رینجرز کی مدت میں توسیع اور اختیارات دینے کا معاملہ طے پاگیا، اس بارے میں فیصلہ دبئی میں پیپلزپارٹی کے اجلاس میں کیا گیا، کو چئیرمین پیپلز پارٹی آصف ذرداری نے سندھ میں رینجرز کے اختیارات میں فوری توسیع کیلئے سندھ حکومت کو ہدایت کردی ہے۔

مزید پڑھیں :  وزیر اعلی سندھ قائم علی شاہ کو تبدیل کرنے کا فیصلہ

زرائع کے مطابق رینجرز کو خصوصی اختیارات تین ماہ کیلئے دیئے جائیں گے جبکہ رینجرز کے قیام میں توسیع ایک سال کیلئے کی جائیگی۔

اس سے قبل پیپلزپارٹی نے وزیراعلی سندھ سید قائم علی شاہ کو ہٹانے کا فیصلہ کرتے ہوئے ان کی جگہ صوبے میں نیا وزیراعلی لانے کا فیصلہ کیا ہے، دبئی میں پیپلزپارٹی کے چیرمین بلاول بھٹو زرداری اورشریک چیرمین آصف زرداری کی زیرصدارت پیپلزپارٹی کا اعلی سطح کا اجلاس ہوا جس میں وزیراعلی سندھ سید قائم علی شاہ، وزیر داخلہ سہیل انور سیال، وزیر خزانہ مراد علی شاہ، رحمان ملک اور مشیر قانون مرتضی وہاب سمیت صوبائی حکومت کی دیگر شخصیات نے شرکت کی۔

مزید پڑھیئے : رینجرز اختیارات کا معاملہ پی پی قیادت کا اہم اجلاس دبئی میں طلب

واضح رہے کہ سندھ میں رینجرز کے اختیارات کی مدت ختم ہونے کے بعد توسیع کا معاملہ کھٹائی میں پڑ گیا تھا، سندھ حکومت کی جانب سے رینجرز کومشروط اختیارات دینے کی تجاویز سامنے آئی تھیں۔

مزید پڑھیں :  رینجرز کے خصوصی اختیارات کی مدت ختم، وزیراعلیٰ سندھ مشاورت کیلئے دبئی روانہ

یاد رہے کہ محکمہ داخلہ سندھ نے تین جولائی کو رینجرز کے اختیارات میں تین ماہ کے اضافے اور رینجرز کے صوبے میں قیام میں ایک سال کے اضافہ کی سمری وزیراعلیٰ سندھ کو ارسال کی تھی۔

اس سے قبل رینجرز کے خصوصی اختیارات میں 77 روز کا اضافہ کیا گیا تھا اور اس طرح رینجرز کے قیام اور خصوصی اختیارات دونوں انیس جولائی کی رات بارہ بجے ختم ہوگئے تھے۔

واضح رہے کہ رینجرز کے اختیارات میں اضافہ اس سے قبل بھی ڈاکٹر عاصم کی گرفتاری کے بعد روک دیا گیا تھا ، وفاقی حکومت کی مداخلت اور اعلیٰ سطحی رابطوں کے بعد اختیارات ختم ہونے کے ایک ہفتے کے بعد رینجرز کے اختیارات میں توسیع کی گئی تھی اور اس کا اطلاق ختم ہونے والی تاریخ سے کیا گیا تھا تاکہ ان اختیارات کو قانونی تحفظ دیا جاسکے۔

 

 

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں