The news is by your side.

Advertisement

سندھ ریزرو پولیس کے1800اہلکاروں کی بھرتیاں جعلی قرار

کراچی : شہید اہلکاروں کے خیر خواہوں نے بم دھماکوں میں شہید ہونے والے اہلکاروں کو بھی نہ بخشا، سندھ ریزرو پولیس کے تیرہ شہیدوں سمیت اٹھارہ سو اہلکاروں کی بھرتیاں جعلی قرار دے دیں گئیں۔

تفصیلات کے مطابق سندھ ریزرو پولیس میں غیر قانونی بھرتیوں کے الزام میں اٹھارہ سو اہلکاروں کے ساتھ ان تیرہ شہید اہلکاروں کو بھی بر طرف کردیا گیا، جو دوران ڈیوٹی دہشت گردی اور فائرنگ کے مختلف واقعات میں جان سے ہاتھ دھو بیٹھے تھے۔

برطرف ہونے والے اہلکاروں کی بڑی تعداد نے کراچی پریس کلب کے باہر مظاہرہ کیا، مظاہرے کے دوران موسم کی تاب نہ لاتے ہوئے تین نوجوان اہلکار بے ہوش ہوگئے جنہیں اسپتال منتقل کیا گیا۔

مظاہرے میں شریک ہونے والی ایک بیوہ خاتون جن کا ایک بیٹا رزاق آباد دھماکے میں شہید جبکہ ایک زخمی ہے گرمی کی شدت سے رمین پر گرگئیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اگر ان نوجوانوں کو روزگار نہ ملا تو منفی سرگرمیوں میں پڑ سکتے ہیں، برطرف ہونے والے اہلکاروں میں ایک سو تین اہلکاروں کا تعلق کراچی جبکہ دیگر کا تعلق سندھ کے مختلف علاقوں سے ہے۔

اہلکاروں کے مطابق وہ باقاعدہ طریقہ کار کے ذریعے ایس آر پی میں بھرتی ہوئے تھے۔

یاد رہے کہ ایس آر پی کے تیرہ اہلکار مختلف بم دھماکوں اور دہشت گردی کے مختلف واقعات میں شہید ہوِئے تھے جبکہ دیگر اہلکار بھی وطن کی خاطر قربانی دینے کے لیے تیار نظر آتے ہیں۔

 

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں