The news is by your side.

Advertisement

کرونا وائرس: سندھ کی سرحدوں پر کڑی نظر رکھی جائے گی

کراچی: کرونا وائرس کے خدشے کے پیش نظر بین الصوبائی بارڈرز کی نگرانی کا فیصلہ کیا گیا ہے، سندھ حکومت کے ذرایع کا کہنا ہے کہ دیگر صوبوں سے آنے والے افراد پر سرحدوں پر کڑی نظر رکھی جائے گی۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق سندھ کے بارڈرز کی کڑی نگرانی کا فیصلہ کیا گیا ہے، اس سلسلے میں سندھ میں داخل ہونے والے مسافروں سے معلومات لی جائیں گی، یہ فیصلہ صوبے میں کرونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے کیا گیا ہے۔

دوسری طرف سندھ حکومت نے کرونا وائرس سے نمٹنے کے لیے ایک اور فیصلہ کر لیا ہے، سندھ حکومت کی جانب سے کراچی کے جناح ایئر پورٹ پر مسافروں کی اسکریننگ کے لیے اسٹاف مقرر کرنے سے متعلق حکام کو احکامات جاری کر دیے گئے۔ اس سلسلے میں لکھے گئے ایک خط میں کہا گیا کہ 60 نرسز تین شفٹوں میں کام کریں گی، ایئرپورٹ سے کسی بھی مشتبہ مریض کو فوری طور پر اسپتال منتقل کیا جائے گا۔

کرونا وائرس ، حاضری کے لیے بائیومیٹرک نظام میں تبدیلی کا فیصلہ

دریں اثنا، کراچی ایئر پورٹ پر بیرون ملک سے آنے دو مسافروں کو مشتبہ قرار دے کر اوجھا اسپتال کے آئیسولیشن وارڈ منتقل کر دیا گیا ہے، حمزہ علی پرواز ای کے 600 پر دبئی سے کراچی پہنچا تھا، جب کہ ساجد حسین پرواز او وی 291 پر مسقط سے جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ پہنچا تھا، دوران اسکریننگ مسافروں میں فلو، بخار اور کھانسی کی شکایات پائی گئیں۔

تفتان میں قرنطینہ سے متعلق افواہوں کے سلسلے میں وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے گزشتہ روز ایک بیان میں کہا کہ تفتان میں 3 ہزار سے زائد لوگوں کو قرنطینہ میں رکھا گیا ہے، قرنطینہ میں موجود افراد میں سے کسی کو کھانسی، نزلہ، زکام نہیں، واٹس ایپ پر چلنے والی افواہوں پر کان نہ دھریں، قرنطینہ میں موجود تمام مریضوں کی صحت بہتر ہے۔ انھوں نے یہ بھی کہا کہ سندھ میں اسکول 16 مارچ سے کھلیں گے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں