The news is by your side.

Advertisement

سانپ سے مساج کروانے کا بڑا فائدہ سامنے آگیا

جکارتہ: انڈونیشیا میں شہرت پانے والا سانپ اور اژدھے کا مساج اب دنیا کے مختلف شہروں تک پہنچ گیا۔

بین الاقوامی میڈیا رپورٹ کے مطابق سانپ اور اژدھوں سے مساج کا آغاز انڈونیشیا کے شہر بالی سے شروع ہوا جسے ’’سانپ مساج‘‘ کا نام دیا گیا، مختصر عرصے میں یہ طریقہ امریکا، برطانیہ، جرمنی اور فلپائن سمیت دنیا کے مختلف ممالک پہنچ گیا اور اب وہاں باقاعدہ ایسے مساج سینٹر کھلے جہاں سانپ اور اژدھے انسانی جسم کو سکون پہنچاتے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق سینٹر میں رکھے ہوئے تمام سانپ بغیر زہر کے ہوتے جبکہ اژدھے بھی پالتو ہوتے ہیں، ان کی نسل اور جسامت کا انتخاب مالک اپنے حساب سے کرتا ہے۔

مساج سینٹر کی جانب سے گاہکوں کو سہولت کچھ اس طرح فراہم کی جاتی ہے کہ اگر کسی کو کمر، بازو، پنڈلیوں، پیروں، گردن اور کاندھوں کی ہلکی پھلکی مالش کرانی ہو تو یہ کام چھوٹے سانپ سے لیا جاتا ہے۔

تربیت یافتہ عملہ اپنی نگرانی میں سانپوں کو انسانی جسم کے متعلقہ حصوں پر چھوڑ دیتے ہیں جہاں وہ رینگتے رہتے ہیں یوں مساج کروانے والے شخص کو سکون محسوس ہوتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق اگر کوئی شخص کم درد وغیرہ کے لیے مساج کرانے آتا ہے تو بڑی جسامت کے طاقتور سانپ یا اژدھے کا استعمال کیا جاتا ہے، اگر مساج کے دوران سانپ رینگتا ہوا کہیں چلا جائے تو اسے پکڑ کر متعلقہ مقام پر رکھنے کا کام عملہ سرانجام دیتا ہے۔

سینٹر کے مالک کا کہنا تھا کہ ’’مساج شروع کرنے سے قبل ہم سانپوں کو اچھے سے دھو لیتے ہیں، بعد ازاں انہیں جسم پر رکھا جاتا ہے، اس سارے عمل کے دوران سانپ کے منہ پر ٹیپ بھی لگایا جاتا ہے تاکہ وہ گاہک کو کسی بھی قسم کا نقصان نہ پہنچائیں‘‘۔

ایک گاہک کا کہنا تھا کہ وہ سانپوں کو اپنا دوست سمجھتا ہے اور اُسے ان سے کسی قسم کا خوف نہیں آتا۔ ’’میں مساج کرنے کے 80 ڈالر ادا کرتا ہوں، یہ رقم وقت کے حساب سے دی جاتی ہے‘‘۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں