The news is by your side.

Advertisement

پائلٹ پروجیکٹ کےتحت کچھ سیکٹرز کھول رہےہیں، اسد عمر

اسلام آباد: وفاقی وزیر منصوبہ بندی و ترقی اسد عمر نے کہا ہے کہ پاکستان میں کوروناکی صورتحال ایسی نہیں جیسی دوسرےممالک میں ہے، اس کامطلب یہ نہیں کہ پاکستان میں کوروناکوکنٹرول کر لیا گیا ہے اگر احتیاطی تدابیر نہیں اپنائی گئیں توصورتحال بگڑبھی سکتی ہے۔

اے آر وائی نیوز کے پروگرام آف دی ریکارڈ میں بات کرتے ہوئے اسد عمر نے کہا کہ ہم پہلےدن سےکہہ رہےتھےکوروناوباکےدوپہلوہیں دونوں کودیکھناہوگا، کہہ رہےتھےہیلتھ رسک کیساتھ ہمیں معاشی رسک بھی لیناہوگا، معاشی پہلو مدنظررکھ کر فیصلے کر رہےتھے پھر بھی تنقیدکانشانہ بنایاگیا، ہم نےوہ قدم نہیں اٹھایاکہ ایک دم سے پورے ملک میں لاک ڈاؤن کرتے۔

اسد عمر نے کہا کہ صحت کی سہولت کےساتھ معاشی صورتحال بھی دیکھناتھی،پائلٹ پروجیکٹ کےتحت کچھ سیکٹرز کو کھول رہےہیں تاکہ صورتحال واضح ہو، روزگار اور آمدن دیکھتے ہوئے فیصلےکیےجائیں کہ کیا کھولا جائے اور کیا بند۔

انہوں نے کہا کہ حکومت12ہزار فی خاندان ایک کروڑ20 لاکھ خاندانوں کو رقم پہنچائےگی، پاکستان میں17ہزار مختلف پوائنٹس سےلوگوں کو رقم کی منتقلی شروع ہوگی، یہ بحث ضروری ہےصرف لاک ڈاؤن نہیں معاشی صورتحال بھی دیکھنی ہے جوشخص یہ بات کرتاتھاکہ لوگ کھائیں گےکیاتواس پرتنقیدہوتی تھی مگر آج یہ بحث ہورہی ہےلوگ بےروزگار ہو رہےہیں ہم یہ ہی کہتےتھے۔

وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ عمران خان پہلےدن سےکہہ رہےتھےکورونا کی وبا کےدو پہلوہیں، معیشت کےجتنےبھی حصےہیں اس کاجائزہ لےکرسفارشات رکھی جائیں گی، 13اپریل کواین سی سی کوسفارشات دی جائیں گےجس پرفیصلہ ہوگا اور جوسیکٹرابھی بھی کھلےہیں ان کےلیےگائیڈلائنزجاری کی گئی ہیں آئندہ جوسیکٹرکھولےجائیں گےان کےلیےبھی گائیڈلائنز دیں گے۔

انہوں نے بتایا کہ 13 اپریل کو قومی رابطہ کمیٹی کا اجلاس بلایا گیا ہے،اجلاس میں فیصلہ کیا جائے گا کہ 15اپریل سے کیا کرنا ہے، اجلاس میں وزیراعظم،وزرائےاعلیٰ شرکت کریں گے پاکستان میں کوروناکی صورتحال ایسی نہیں جیسی دوسرےممالک میں ہے، اس کامطلب یہ نہیں کہ پاکستان میں کوروناکوکنٹرول کر لیا گیا ہے اگر احتیاطی تدابیر نہیں اپنائی گئیں توصورتحال بگڑبھی سکتی ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں