The news is by your side.

Advertisement

کووڈ نائنٹین مریضوں کا علاج، یو اے ای نے تاریخ رقم کردی

ابوظہبی: متحدہ عرب امارات نے کووڈ 19 وائرس سے متاثرہ مریضوں کے علاج میں دنیا کے نئے اینٹی وائرل طریقہ علاج کا کامیاب استعمال کیا ہے۔

متحدہ عرب امارات میں صحت عامہ کے سب سے بڑے نیٹ ورک ادارہ ابوظہبی ہیلتھ سروسز کمپنی صحۃ نے کووڈ نائنٹین وائرس سے متاثرہ مریضوں کے علاج میں دنیا کے نئے اینٹی وائرل طریقہ علاج “سوترو ویماب” کے کامیاب استعمال کیا ہے۔

صحۃ کے چیف میڈکل آفیسر ڈاکٹر انور سلام کا کہنا ہے کہ ادارے نے اس عالمی وباء سے نمٹنے میں موثر قومی ردعمل کیلئے کلیدی کردار ادا کیا اور اس کے علاج کی خاطر ملکی معاشرے میں بانی خدمات فراہم کیں۔

ابوظہبی کے محکمہ صحت کے تعاون سے سوترو ویماب کو ہنگامی بنیادوں پر کووڈ 19 کے متاثرین کے علاج میں کامیابی سے استعمال کیا گیا ، اس علاج کو پانے والے مریضوں میں بہت کم وقت کے اندر مثبت صورتحال اور بہتری دیکھنے میں آئی۔

مریضوں کے تجربات

سعید العامری مقامی شہری ہے، جنہیں رواں سال کے آغاز پر یہ وائرس لگا اور اس کے بعد انہیں شدید بخار ، سردرد اور جسمانی درد کا سامنا رہا ، اس دوران وہ گھر پر قرنطینہ رہے لیکن بعد میں انہیں شیخ خلیفہ میڈیکل سٹی کے انتہائی نگہداشت یونٹ میں زیر علاج ہونا پڑا ، وہاں ان کا سوترو ویماب سے علاج ہوا ، اس کے بعد اسکا بخار تیزی سے اترا اور اسکی مجموعی صحت حالت بہتر ہونا شروع ہوگئی۔

اسی عرصہ میں العامری کی اہلیہ اور والدہ کی حالت بھی اسی وائرس کی وجہ سے بگڑنا شروع ہوگئی ، ان دونوں کو فوری طور پر ایس کے ایم سی کے انتہائی نگہداشت یونٹ میں داخل کرایا گیا ، ان کا بھی سوتروویماب سے علاج کیا گیا اور وہ دونوں بھی چار دن میں ہسپتال سے ڈسچارج ہوئے۔

واضح رہے کہ سوترو ویماب کو امریکی ایف ڈی اے اور متحدہ عرب امارات کی وزارت صحت و تدارک نے کووڈ 19 کے ہنگامی علاج کیلئے منظور کررکھا ہے ، اسے عالمی سطح پر علاج معالجہ کی مایہ ناز کمپنی جی ایس کے نے تیار کیا ہے ، اس کی وجہ سے کووڈ 19 کے باعث ہونے والی اموات میں 85 فیصد کمی دیکھنے میں آئی ہے اور مریضوں کے بہت جلد ہسپتال سے فارغ ہونے کا رحجان بھی دیکھا گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں