The news is by your side.

Advertisement

نقل کروانے کے الزام میں گرفتار ملزم خود کو رینجرز اہلکار کہتا ہے، ایس ایس پی

کراچی: ایس ایس پی وسطی کراچی نے کہا ہے کہ مقامی کالج میں نقل کروانے کے الزام میں گرفتار کیے جانے والے شخص کا دعویٰ ہے کہ وہ رینجرز کا اہلکار ہے جسے شناخت کے لیے رینجرز تھانے لے آئی۔

تفصیلات کے مطابق ضلع وسطی میں واقع امتحانی مرکز سے طالب علموں کو نقل کروانے والے شخص کو گرفتار کر لیا گیا جسے پولیس تھانے حیدری نارتھ ناظم منتقل کیا گیا جہاں دوران تفتیش ،ملزم نے خود کو رینجرز کا اہلکار ظاہر کیا جس کے بعد تھانہ ایس ایچ او مقامی رینجرز سیکٹر کمانڈر کو اطلاع دی گئی۔

ایس ایس پی ضلع وسطی مقدس حیدر نے کہا کہ رینجرز حیدری تھانے میں ایک ملزم کی شناخت کے لیے آئی تھی جو خود کو رینجرز کا اہلکار بتا رہا تھا اور جسے پولیس نے مقامی کالج میں طالب علموں کو نقل کروانے کے الزام میں گرفتار کیا تھا۔


*انٹر کے امتحانات میں نقل، بھارتی موبائل فونز کے استعمال کا انکشاف


ایس ایس پی ضلع وسطی کا کہنا تھا کہ اس معاملے پر کالج انتظامیہ اور چیئرمین بورڈ سے مشاورت جاری ہے اور دونوں کی مرضی کے مطابق گرفتار شخص کی قسمت کا فیصلہ کیا جا ئے گا۔


*نقل روکنے کے لیے وزیر اعلیٰ سندھ کے امتحانی مراکز کے دورے


ایس ایس پی ضلع وسطی نے کہا کہ نقل کی روک تھام کے لیے سخت اقدامات کیے ہیں اور نقل مافیا سے تعلق رکھنے والے کسی شخص یا گروہ کی گرفتاری کے لیے تمام تر قانونی راستے اپنائے جائیں گے۔

واضح رہے کہ سندھ میں جاری امتحانات میں بد انتظامی اور نقل مافیا کی سرگرمیاں عروج پر ہیں جس کے لیے پہلے صوبائی وزیر تعلیم جام مہتاب نے بیان دیا کہ نقل مافیا کی جانب سے بنائے گئے واٹس اپ گروپ میں بھارتی نمبرز بھی شامل ہیں جس کے بعد یہ معاملہ سی ٹی ڈی کے حوالے کیا گیا تھا۔

تاہم صوبائی وزیرتعلیم کی کاوشیں ناکافی ثابت ہوئیں جس کے بعد وزیراعلیٰ سندھ نے خود نقل مافیا کی سرکوبی کی ذمہ داری خود اُٹھائی اور کئی امتحانی مراکز کا ہنگامی دورہ کیا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں