The news is by your side.

لاپتا افراد کی ذمہ دار ریاست ہے: وفاقی وزیر داخلہ

کراچی: وفاقی وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ لاپتا افراد کی ذمہ دار ریاست ہے، کسی کو لاپتا کر دینا پاکستان کی بدنامی ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ نے آج منگل کو کراچی میں ایم کیو ایم کے مرکز بہادر آباد کا دورہ کیا، انھوں نے ایم کیو ایم پاکستان کی قیادت کے ساتھ ساتھ لاپتا کارکنان کے لواحقین سے بھی ملاقات کی۔

رانا ثنا نے خالد مقبول صدیقی اور دیگر رہنماؤں کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا لاپتا افراد کا دکھ موت سے بھی زیادہ درد ناک ہے، ملاقات میں ایم کیو ایم کی لیڈر شپ دلبرداشتہ، مایوس اور دکھی تھی۔

انھوں نے کہا ہم وزیر اعظم کی ہدایت پر یہاں آئے ہیں، وزیر اعظم سے ایم کیو ایم کی اس دن میٹنگ ہوئی تھی جب ان کے تین کارکنان کی لاشیں ملی تھیں، اس میٹنگ میں بہت سارے پہلوؤں پر بات ہوئی، اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ کسی کو لاپتا بنا دینا پاکستان کی بدنامی ہے، یہ ریاست کی ذمہ داری ہے۔

ایم کیو ایم اور رانا ثنا ملاقات کا ثمر، 2 لاپتا کارکنان بازیاب

انھوں نے کہا اس ملاقات میں لاپتا کیسز کی روک تھام کے لیے کئی اقدامات پر بھی اتفاق ہوا، یہ فیصلہ بھی ہوا کہ ہم کراچی جائیں گے اور متاثرہ فیملیز سے ملیں گے، ہم نے ان فیملیز کو یقین دلایا ہے کہ ان کے پیاروں کی بازیابی کے لیے کوئی کسر اٹھا نہیں رکھیں گے۔

رانا ثنا نے کہا اس سے پہلے کوئٹہ میں لاپتا افراد کے لواحقین نے 50 دن سے دھرنا دیا ہوا تھا، اور ہماری یقین دہانی پر انھوں نے دھرنا ختم کیا، ہمارا مؤقف رہا ہے تشدد اور گمشدگی آئین پاکستان کی خلاف ورزی ہے، ہمیں امید ہے کہ ایم کیو ایم ہم پر اپنا اعتماد قائم رکھے گی۔

اس موقع پر ایم کیو ایم کے کنوینر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہمارے رویے سے اندازہ ہو گیا ہوگا کہ ہم کوئی دہشت گرد نہیں، ہمیں اتنی ہی سزا دی جائے جتنے ہم گناہ گار ہوں۔ انھوں نے کہا ہم وزیر داخلہ اور ایاز صادق کے شکر گزار ہیں کہ وہ یہاں آئے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں