The news is by your side.

Advertisement

سو سال بعد بھی تاریخی محل کا رنگ نہ بدلہ

ریاض : اسلامی اور رومن فن تعمیر کا امتزاج تاریخی محل البوقری سعودی عرب کے شہر طائف میں آج بھی اپنی اصل حالت میں موجود ہے جسے 1348 ھ میں تعمیر کیا گیا تھا۔

تفصیلات کے مطابق سعودی عرب کےشہر طائف میں واقع آثار قدیمہ کےاس اہم تاریخی محل کو البوقری محل کا نام دیا گیا ہے جو ریاست کے اہم محلات میں سے ایک ہے، اس محل کو بوقری خاندان کے دو بھائی عمر اور احمد نے تعمر کرایا تھا جو مکہ کے ایک تاجر خاندان کے چشم و چراغ تھے۔

محل کے سپر وائزر دخیل الحمیدی نے عرب خبر رساں ادارے کو بتایا کہ محل کو طائف کے پہاڑوں سے لائے گئے ماربل اور نورا کے پتھروں سے تیار کیا گیا تھا اور ان پتھروں کوایک خاص رنگ میں رنگا گیا تھا جو ابھی تک برقرار ہے۔

عرب خبر رساں ادار ے کا کہنا تھا کہ تین منزلوں پر مشتمل محل تعمیر کرنے والوں نے اس میں جو پتھر استعمال کیے ان میں یہ خوبی ہے کہ وہ گرمی میں ٹھنڈے اور سردیوں میں محل کو گرم رکھتے ہیں۔

محل کے سپر وائزر کا کہنا تھا کہ محل کے بیڈ روم، استقبالیہ اور بیت الخلاء کو سنگ مرمر سے تعمیر کیا گیا تھا اور لکڑی کا کام اس کی خوبصورتی میں چار چاند لگادیتا ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ محل اب بھی اپنی اصل حالت میں موجود ہے اس کےلیے سیاحوں کی توجہ کا مرکز بنا رہتا ہے اور چھٹیوں کے روز یہاں بہت زیادہ رش ہوتا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں