کراچی میں نفری کی کمی کے باعث جرائم روکنا مشکل ہے، ڈی آئی جی خادم رند -
The news is by your side.

Advertisement

کراچی میں نفری کی کمی کے باعث جرائم روکنا مشکل ہے، ڈی آئی جی خادم رند

کراچی : ڈی آئی جی خادم رند نے کہا ہے کہ دوکروڑ سے آبادی والے شہر میں جرائم روکنا مشکل کام ہے، بچوں کے اغوا سے متعلق افواہیں بھی سرگرم رہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے اے آر وائی نیوز سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کیا، شہر قائد میں روز بروز بڑھتی جرائم کی وارداتوں سے شہری پریشان ہیں، یومیہ ہونے والی درجنوں وارداتوں میں شہری اپنے قیمتی سامان اور نقدی سے محروم ہوجاتے ہیں اس حوالے سے اے آروائی نیوز نے خصوصی ٹرانسمیشن کا اہتمام کیا۔

پروگرام میں ڈی آئی جی خادم رند، چیف سی پی ایل سی احمدچنائے، تاجررہنما جمیل پراچہ ایم کیو ایم رہنما خواجہ اظہارالحسن بھی موجود تھے۔

پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے ڈی آئی جی خادم رند نے کہا کہ تھانوں کو زیادہ فوکس کیا جائے تو مسائل میں کمی ہوگی، میرٹ پرکام کیا ہے اور مستقبل میں بھی میرٹ پر کام کریں گے، بچوں کے اغوا سے متعلق افواہیں بھی سرگرم رہیں۔

ڈی آئی جی خادم رند نے شہر میں جرائم میں اضافے کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ دو کروڑ سے زائد آبادی کے شہر میں نفری کی کمی کے باعث جرائم روکنا مشکل کام ہے، بعض واقعات میں پولیس کی جانب سے رویے کا فقدان بھی ہے، خادم رند نےانکشاف کیا کہ بعض ملزمان بیس بیس مرتبہ پکڑے گئے۔

اسٹریٹ کرائم کی وجہ سےکراچی کی صورتحال پھر سے خراب ہوتی جارہی ہے، جمیل پراچہ 

اس موقع پر تاجر رہنما جمیل پراچہ کا کہنا تھا کہ کراچی کی صورتحال پھر سے خراب ہوتی جارہی ہے، اسٹریٹ کرائم کی وجہ سے کاروبار میں30سے40فیصد کمی ہوئی، چھوٹےتاجروں کو زیادہ نقصان ہورہا ہے۔

ایس ایچ او کو معلوم ہوتا ہے کہ اسٹریٹ کرائم کون کررہاہے، چیف سی پی ایل سی احمد چنائے

چیف سی پی ایل سی احمد چنائے نے کہاکہ مانتا ہوں اسٹریٹ کرائم کم ہونے کے بجائے بڑھے، البتہ اسٹریٹ کرائمز کےعلاوہ دیگر جرائم90فیصد تک کم ہوئے، اسٹریٹ کرائمز کی روک تھام کیلئے خصوصی توجہ دینا ہوگی۔

احمد چنائے کا مزید کہنا تھا کہ علاقے کے تھانیدار کو معلوم ہوتا ہے اسٹریٹ کرائم کہاں اور کون کررہا ہے، اسٹریٹ کرائمز کی روک تھام کیلئے تھانے کوذمہ دار بنانا ہوگا۔

شہرقائد میں حکومت کی رٹ نظر نہیں آرہی، خواجہ اظہارالحسن

متحدہ قومی موومنٹ کے رہنما خواجہ اظہارالحسن نے کہا کہ شہرقائد میں حکومت کی رٹ نظر نہیں آرہی، کراچی میں اب بھی17بچے لاپتہ ہیں، پولیس کواستعداد سے متعلق مسائل درپیش ہیں، محکمہ پولیس میں سیاسی بھرتیاں کی گئی تھیں، اب بھرتیاں این ٹی ایس سے ہوتی ہیں مگرنظر نہیں آتی، پولیس کے تھانوں کی صورتحال سے سب واقف ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں