The news is by your side.

Advertisement

سندھ میں جنگلات کی کٹائی: سپریم کورٹ کا صوبائی حکومت کی رپورٹ پرعدم اطمینان کا اظہار

اسلام آباد: سندھ میں جنگلات کی کٹائی سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران قائم مقام چیف جسٹس عظمت سعید شیخ نے ریمارکس دیے کہ درخت لگانے میں سندھ حکومت کوآخر کیا مسئلہ ہے؟۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں قائم مقام چیف جسٹس عظمت سعید شیخ کی سربراہی میں سندھ میں جنگلات کی کٹائی سےمتعلق کیس کی سماعت ہوئی۔

عدالت عظمیٰ نے ریمارکس دیے کہ جنگلات کی زمین واگزارکرانے کا حکم پہلے ہی دے چکے ہیں، کیس نمٹانے کے فیصلے کی آخری لائن آپ کو یاد رہے گی۔

سپریم کورٹ نے ریمارکس دیے کہ عدالتی حکم کے بعد تحقیقاتی ادارے جانیں اور سندھ حکومت، پیشرفت رپورٹ میں لکھا ہے کابینہ کے فیصلے کا انتظارہے۔

عدالت عظمیٰ نے ریمارکس دیے کہ ایڈووکیٹ جنرل وزیراعلیٰ سندھ سے بات کریں، یقینی بنایا جائے تمام فیصلے بروقت ہوں۔

جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیے کہ سندھ حکومت آخرفیصلہ کیوں نہیں کرپا رہی؟، سپریم کورٹ نے ریمارکس دیے کہ جنگلات اوردرخت لگانا حکومت کی ترجیحات میں شامل نہیں۔

قائم مقام چیف جسٹس عظمت سعید شیخ نے ریمارکس دیے کہ درخت لگانے میں سندھ حکومت کوآخر کیا مسئلہ ہے؟۔

چیف کنزرویٹوفاریسٹ نے عدالت عظمیٰ میں کہا کہ جنگلات کےعملے پرمنشیات کے جعلی مقدمات بنائے گئے۔ سپریم کورٹ نے سندھ حکومت کی رپورٹ پرعدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کیس نیب کوبھجوانے کا بھی عندیہ دے دیا۔

بعدازاں عدالت عظمیٰ نے 3 ہفتے میں حکومت سے پیشرفت رپورٹ طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت ملتوی کردی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں