The news is by your side.

Advertisement

جائیداد کی تقسیم، سپریم کورٹ کا مثالی فیصلہ

سوات: جائیداد کی تقسیم سے متعلق ایک کیس میں سپریم کورٹ نے حکم جاری کیا ہے کہ جائیداد کی تقسیم شرعی اصولوں کے تحت ہی ہوگی۔

تفصیلات کے مطابق آج خیبر پختون خوا کے شہر سوات میں جائیداد کی تقسیم کے ایک کیس کی سپریم کورٹ میں سماعت ہوئی، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے سماعت کرتے ہوئے قرار دیا کہ عدالت یا جرگہ وراثتی جائیداد تقسیم کا شرعی قانون بدل نہیں سکتا۔

جائیداد کی تقسیم سے متعلق نچلی عدالتوں کے تینوں فیصلے کالعدم قرار دیتے ہوئے عدالت نے حبیب اللہ مرحوم کی جائیداد شرعی اصول کے تحت تقسیم کرنے کا حکم جاری کر دیا۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا جرگے کا فیصلہ دین الٰہی سے بڑا نہیں ہو سکتا، جرگے کے فیصلے سے دین الٰہی تبدیل نہیں کیا جا سکتا۔

انھوں نے سماعت کے دوران کہا جائیداد تقسیم کی جو دستاویزات پیش کی گئی ہیں، ان پر 7 سالہ بچے کے انگوٹھے کا نشان لگایا گیا ہے، سات سالہ بچے کو تو قتل کیس میں پھانسی بھی نہیں ہو سکتی، ایسے دستاویزات کے ذریعے قانون کی دھجیاں اڑائی گئی ہیں۔

جسٹس فائز عیسیٰ نے کہا یہ کیس جس علاقے سے متعلق ہے، وہاں عورت کو انسان نہیں سمجھا جاتا، سعودی عرب میں جائیداد کی تقسیم کا فیصلہ ایک دن میں ہوتا ہے، اور پاکستان میں جائیداد کی تقسیم کا فیصلہ ہوتے 40 سال لگ جاتے ہیں۔

انھوں نے کہا جائیداد کی تقسیم کا شرعی اصول 1450 سال پہلے طے ہو چکا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں