The news is by your side.

Advertisement

سپریم کورٹ نے ترک ایجوکیشن تنظیم کو دہشت گرد قرار دے دیا، اکاؤنٹس منجمد

اسلام آباد : سپریم کورٹ نے پاک ترک انٹرنیشنل کیگ ایجوکیشن تنظیم کو دہشت گرد تنظیم قرار دے کر وزارت خزانہ کو اکاؤنٹس ترک معارف فاؤنڈیشن منتقل کرنے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق پاک ترک انٹرنیشنل کیگ ایجوکیشن تنظیم کو دہشت گرد تنظیم قرار دینے کے معاملے پر سپریم کورٹ کے3رکنی بینچ نے فیصلہ جاری کردیا۔

عدالت نے پی ٹی آئی سی ایف کو دہشت گرد تنظیم قرار دیتے ہوئے فیصلے میں لکھا ہے کہ ترکی بھی مذکورہ تنظیم کو دہشت گرد قراردے چکا ہے، اس کے علاوہ پاکستان کے ترکی کے ساتھ برادرانہ اور دیرینہ تعلقات ہیں اور پاکستان بین الاقوامی سفارتی معاہدوں پر عملدرآمد کا پابند ہے۔

فیصلہ میں مزید کہا گیا ہے کہ حکومت فتح اللہ گولن اوردیگر تنظیموں کو بھی دہشت گرد قرار دے اور تنظیم کے تمام اثاثے ترکی معارف فاؤنڈیشن کو منتقل کیے جائیں، مذکوہ تنظیم کے تحت چلنے والے28اسکولوں کا بندوبست معاہدوں کی روشنی میں کیا جائے۔

سپریم کورٹ کا کہنا ہے کہ پاک ترک انٹرنیشنل کیگ ایجوکیشن کے اکاؤنٹس منجمند کیے جائیں، وزارت داخلہ اندراج انسداد دہشت گری ایکٹ کی سیکشن بی11کے تحت کرے جس کے بعد وزارت خزانہ اس کے تمام اکاؤنٹس ترک معارف فاؤنڈیشن منتقل کرنے کا انتظام کرے، پاک ترک انٹرنیشنل کیگ ایجوکیشن کے نام سے تمام این اوسی منسوخ ہیں، کسی دہشت گرد تنظیم کا پاکستان میں کام نہ کرنا ملک کے مفاد میں ہے۔

فیصلہ میں مزید کہا گیا ہے کہ پاک ترک انٹرنیشنل کیگ ایجوکیشن فاؤنڈیشن1990میں قائم ہوئی، تنظیم کے28اسکول ترک حکومت کے تعاون سے چلتے رہے، کیگ ایجوکیشنل ترکی میں ناکام فوجی حکومت کے قیام میں ملوث تھی۔

اسلامی سربراہی کانفرنس نے فتح اللہ تنظیم کو دہشت گرد قرار دیا، فتح اللہ تنظیم پاک ترک انٹرنیشنل کیگ ایجوکیشن کی پیرنٹ آرگنائزیشن ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں