پاکستان سے اچھے تعلقات کی خواہش، نوجوت سنگھ سدھو کے خلاف انتقامی اقدام
The news is by your side.

Advertisement

پاکستان سے اچھے تعلقات کی خواہش، نوجوت سنگھ سدھو کے خلاف انتقامی اقدام

نئی دہلی : پاکستان آنا اوردوستی کا ہاتھ بڑھانا سابق بھارتی کرکٹر نوجوت سنگھ سدھو کا جرم بن گیا، عمران خان کی تقریب حلف برداری میں شرکت کے بعد وطن واپس لوٹنے والے سدھو  پر 20 سالہ پرانا ٹریفک حادثے کا مقدمہ کھول دیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان سے اچھے تعلقات کی خواہش سابق بھارتی کرکٹرنوجوت سنگھ کا بڑا جرم بن گیا، وزیراعظم عمران خان کی تقریب حلف برداری میں شرکت کے بعد سے بھارتی انتہاپسندوں کی جانب سے نفرت اور تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔

ایک اور انتقامی اقدام کرتے ہوئے بھارتی سپریم کورٹ میں سدھو کیخلاف بیس سالہ پرانا سڑک حادثے کا مقدمہ کھول دیا گیا، بھارتی سپریم کورٹ نے 1998 میں ہونے والے ٹریفک حادثے میں ایک شخص کی ہلاکت سے متعلق کیس میں اپنے فیصلے پر نظرثانی کا فیصلہ کیا ہے۔

خیال رہے 1998 میں سدھو اور ان کے دوست روپیندر سنگھ ساندھو کی گاڑی کی زد میں آکر ایک شخص ہلاک ہوگیا تھا، درج مقدمے میں عدالت نے سدھو کو باعزت بری کردیا تھا۔

اب متاثرہ افرادکی درخواست پر دوبارہ مقدمہ چلایا جائے گا۔

مزید پڑھیں : پاکستان کرتاپور کا راستہ کھولنے کو تیار ہے، بھارت خیرسگالی کاجواب دے، سدھو

خیال رہے کرتارپور بارڈر پر نوجوت سنگھ سدھونے مودی سرکار کو پاکستان کی خیرسگالی کا جواب خیرسگالی سے دینے کا مشورہ بھی دیا تھا۔

سدھو کا کہنا تھا کہ اپنے دوست اور پاکستان کے وزیراعظم کا شکریہ ادا کرنے کے لئےالفاظ نہیں ہیں، یہ پہل اتنی جلدی ہوئی کہ اس کا اندازہ بھی نہیں تھا۔

واضح رہے بھارت کے سابق کرکٹر نوجوت سنگھ سدھو نے عمران خان کی حلف برداری میں شرکت اور آرمی چیف جنرل جاوید باجوہ مختصر ملاقات کی تھی، ملاقات میں آرمی چیف نے نوجوت سنگھ سدھو سے گرمجوشی سے مصافحہ کیا، خیریت دریافت کی اور گلے بھی ملے۔

جس کے بعد بھارتی میڈیا اور انتہا پسند آگ بگولہ ہوگئے تھے، مشتعل افراد نے سدھو کے پوسٹر اور پتلے کو آگ لگائی گئی جبکہ انتہا پسند جماعتوں نے بھارت کے مختلف علاقوں میں مظاہرے کیے، جس میں سدھو کے پتلے کو بھی نذر آتش کیا گیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں