سندھ پولیس میں افسران کے تبادلے، سپریم کورٹ نے ازخود نوٹس لے لیا -
The news is by your side.

Advertisement

سندھ پولیس میں افسران کے تبادلے، سپریم کورٹ نے ازخود نوٹس لے لیا

اسلام آباد : سپریم کورٹ نے اویس شاہ اغواء کیس میں افسران کو بحال کرنے کانوٹس لیتے ہوئے سیکریٹری داخلہ اورآئی جی سندھ کو چارجولائی کو طلب کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ کے چیف جسٹس انور ظہیر جمالی نے سندھ پولیس میں سیاسی مداخلت کا ازخود نوٹس لے لیا۔ سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سید سجاد علی شاہ کے بیٹے اویس شاہ کے اغواء کے بعد معطل ہونے والے ایس ایس پی ساﺅتھ فاروق احمد کو بحال کرنے پر چیف جسٹس سُپریم کورٹ نے نوٹس لیتے ہوئے سیکریٹری داخلہ اورآئی جی سندھ کو چارجولائی کوطلب کرلیا ہے۔

چیف جسٹس نے سندھ پولیس میں مداخلت پر جسٹس امیر ہانی مسلم کے نوٹ کو آئینی درخواست میں تبدیل کردیا۔ جسٹس امیر ہانی مسلم نے نوٹ لکھا تھا کہ سندھ پولیس میں سیاسی مداخلت کراچی بدامنی کیس کے فیصلے کی خلاف ورزی ہے۔

سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے ایک کاروباری شخصیت کے “فرنٹ مین” کی سندھ پولیس میں مداخلت کی خبر کا نوٹس لیتے ہوئے چیف سیکریٹری ، سیکریٹری داخلہ، آئی جی سندھ اور دیگر سے جواب طلب کر لیا ہے۔

واضح رہے کہ چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ کے بیٹے کو کلفٹن سے نامعلوم افراد اغواء کرکے لے گئے، تمام سیکیورٹی ادارے انہیں تلاش کررہے ہیں۔

اس حوالے سے جے آئی ٹی بھی تشکیل دی جاچکی ہے تاہم ابھی تک ان کی بازیابی تو درکنار ان کے اغواء سے متعلق کوئی سراغ تک نہ لگایا جاسکا۔

 

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں