سیمنٹ فیکٹریوں کی جانب سے پانی کےغیرقانونی استعمال کا کیس -
The news is by your side.

Advertisement

سیمنٹ فیکٹریوں کی جانب سے پانی کےغیرقانونی استعمال کا کیس

سپریم کورٹ نے سیکرٹری لوکل گورنمنٹ اور ڈی جی نیب کو طلب کرلیا

لاہور: سپریم کورٹ نے سیمنٹ فیکٹریوں کی جانب سے پانی کےغیرقانونی استعمال سے متعلق کیس میں سیکرٹری لوکل گورنمنٹ اور ڈی جی نیب کو عدالت طلب کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں سیمنٹ فیکٹریوں کی جانب سے پانی کے غیرقانونی استعمال سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔ عدالت میں کمپنیوں کے نمائندے اپنے وکلا کے ہمراہ پیش ہوئے۔

جسٹس اعجازالاحسن نے سماعت کے دوران ریمارکس دیے کہ 10لاکھ فی کیوسک روزانہ کی قیمت مقررکی گئی تھی، نوٹیفکیشن میں روزانہ کوکاٹ کرماہانہ کردیا گیا۔

چیف جسٹس آف پاکستان نے ریمارکس دیے کہ نوٹیفکیشن میں کس نے تبدیلی کی وہ سامنے آئے عدالت نے کہا کہ پانی کی پہلے ہی قلت ہے، ایسے اقدامات سے ملک کو خشک کرنا چاہتے ہیں؟۔

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے کہا کہ لوگوں کے پاس پینے کا صاف پانی نہیں ہے، فیکٹریاں پینے کا پانی استعمال کررہی ہیں، آپ کی کمپنی کی وجہ سے کٹاس راج کا بیڑاغرق ہوگیا۔

انہوں نے ریمارکس دیے کہ سی پیک منصوبے کی تکمیل کے لیے سیمنٹ کمپنی بند نہیں کرنا چاہتے۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ آف پاکستان نے سیمنٹ فیکٹریوں کو زمینی پانی استعمال کرنے کی بجائے پانی کا متبادل انتظام کرنے کی ہدایت کی تھی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں