The news is by your side.

Advertisement

طالبان کابل میں داخل؛ عبداللہ عبداللہ نے مہلت مانگ لی

افغان مصالحتی کونسل کے سربراہ عبداللہ عبداللہ نے طالبان سے مذاکرات کے لیے مہلت مانگ ‏لی۔

ایک بیان میں عبداللہ عبداللہ نے کہا کہ طالبان کابل میں داخلےسےقبل مذاکرات کیلئےکچھ وقت ‏دیں، افغانستان کےعوام پرسکون رہیں اور افغان فورسزسیکیورٹی یقینی بنانےمیں تعاون کریں۔

انہوں نے اشرف غنی کے ملک چھوڑنے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ اشرف غنی نےافغانستان چھوڑ ‏دیا ہے۔ ڈاکٹرعبداللہ عبداللہ نےاشرف غنی کیلئےسابق صدرکالفظ استعمال کیا۔

افغان وزیر دفاع نے بھی ردعمل میں کہا ہے کہ اشرف غنی ہمیں قیدمیں چھوڑکربھاگ گئے۔

صدر اشرف غنی کے مستعفی ہونے اور ملک چھوڑنے کے بعد کابل میں افراتفری ‏پھیل گئی ہے لوگ ‏بینکوں سے پیسے نکلوانے کے لیے باہر نکل آئے ہیں اور سڑکوں پر شدید ٹریفک ‏جام ہے۔
ترجمان طالبان ذبیح اللہ مجاہد کا کہنا ہے کہ جنگجوؤں کوکابل میں داخل ہونےکاحکم دیا ہے تاکہ ‏‏لوٹ مار کو روکا جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ عوام طالبان سےخوفزدہ نہ ہوں افغان فورسزجن چوکیوں کوچھوڑرہےہیں طالبان ‏‏کنٹرول کررہےہیں خالی چوکیوں پرکنٹرول کامقصدلوٹ مار کو روکنا ہے۔

طالبان نے افغان حکام اور فوجیوں کیلئےعام معافی کا اعلان بھی کیا ہے اور یقین دہانی کروائی ہے ‏‏کہ کسی کیخلاف کوئی انتقامی کارروائی نہیں کی جائےگی۔

طالبان نے واضح کیا ہے کہ کابل میں اسپتالوں، ایمرجنسی سروسز کو نہیں روکا جائےگا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں