The news is by your side.

Advertisement

طالبان افغان صدر کے سامنے ڈٹ گئے

کابل: طالبان نے افغان صدر اشرف غنی کی 1500 قیدیوں کو رہا کرنے کی تجویز مسترد کردی۔

غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق افغان حکومت طالبان سے مذاکرات چاہتی ہے جس کے لیے افغان صدر طالبان کے 1500 جنگجوؤں کو رہا کرنے کے لیے تیار ہیں۔

افغان طالبان نے افغان صدر کی 1500 قیدیوں کی رہائی کی تجویز مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ امن مذاکرات سے پہلے 5000اسیروں کی رہائی چاہتے ہیں جس کے بعد ہی بات چیت کا آغاز ہوگا۔

طالبان ترجمان سہیل چاہین کا کہنا ہے کہ حقیقی بنیاد پر مضبوط مذاکرات کے لیے افغان حکومت کو ہمارے پانچ ہزار قیدیوں کو رہا کرنے ہوں گے۔ انہوں نے خبردار بھی کیا کہ امریکا اور طالبان کے درمیان ہونے والی بات چیت میں جن امور پر اتفاق ہوا اگر ان کی خلاف ورزی ہوئی تو ڈیل ختم ہوسکتی ہے۔

افغان صدر نے طالبان قیدیوں کی رہائی کے حکمنامے پر دستخط کردئیے

افغان صدر نے طالبان کو مذاکرات کی میز پر لانے کے لیے آفر کی تھی کہ وہ پندرہ سو جنگجوؤں کو رہا کریں گے جبکہ دیگر 3500 شدت پسندوں کو بات چیت شروع ہونے کے بعد چھوڑ دیا جائے گا۔

خیال رہے کہ افغان صدراشرف غنی نے طالبان قیدیوں کی رہائی کے حکمنامے پر دستخط بھی کردیے ہیں۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں