The news is by your side.

Advertisement

طالبان کے قبضے نے جارج بش کو گہری اداسی میں مبتلا کر دیا

واشنگٹن: سابق امریکی صدر جارج ڈبلیو بش نے افغانستان پر طالبان کے قبضے پر گہری اداسی کا اظہار کر دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق امریکا کے سابق صدر بش کابل پر طالبان کے برق رفتار قبضے کو گہری اداسی سے دیکھ رہے ہیں، انھوں نے واشنگٹن سے مطالبہ کیا کہ افغانستان سے انخلا کو تیز تر کیا جائے۔

یاد رہے کہ بش نے نائن الیون کے واقعے کے بعد 2001 میں طالبان کی حکومت کے خاتمے کے لیے افغانستان پر حملے کا حکم جاری کیا تھا، پیر کو ایک خط میں بش نے کہا کہ وہ اور سابق خاتون اول لارا بش حمایت اور تعاون کے لیے امریکی ہونے کے ناطے تیار ہیں۔

بش نے کہا کہ ہمارے دل افغانوں، امریکیوں اور ناٹو کے اتحادیوں کے لیے نہایت بوجھل ہیں، کیوں کہ انھوں نے بہت تکالیف برداشت کیں، اور بہت زیادہ قربانیاں دیں۔

سابق صدر نے اعتماد ظاہر کیا کہ انخلا مؤثر ہوگا لیکن انھوں نے صدر جو بائیڈن پر زور دیا کہ وہ طالبان کی طرف سے خطرہ محسوس کرنے والے افغانوں اور امریکیوں کو نکالنے میں تیزی لائیں۔

بش نے کہا یہ ہماری ذمہ داری ہے اور ہمارے پاس وسائل بھی ہیں کہ کسی بیوروکریٹک تاخیر کے بغیر انھیں محفوظ طریقے سے نکال لائیں۔

لیکن سابق صدر نے کہا کہ افغان تنازع بے کار نہیں گیا، انھوں نے کہا کہ امریکی فوجیوں نے اسکولوں کی تعمیر اور طبی سہولیات کی فراہمی کے دوران ایک سفاک دشمن کو بھی نکال دیا ہے، اور امریکا کو مزید دہشت گرد حملوں سے محفوظ کر دیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں