ٹیکس ایمنسٹی سکیم کالعدم قرار دینے کے لیے درخواست پر فیصلہ محفوظ -
The news is by your side.

Advertisement

ٹیکس ایمنسٹی سکیم کالعدم قرار دینے کے لیے درخواست پر فیصلہ محفوظ

لاہور: ہائی کورٹ نے تاجروں کے لیے ٹیکس ایمنسٹی سکیم کو کالعدم قرار دینے کے لئے دائر درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا‘ ٹیکس چوروں کو عام معافی آئین پاکستان اور ملکی قوانین کی خلاف ورزی ہے۔

تفصیلات کے مطابق آج بروز جمعرات لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس شاہد کریم نے کیس کی سماعت کی‘ درخواست گزار کے وکیل شیراز ذکاء نے موقف اختیار کیاکہ حکومت نے سیاسی مقاصد کے لئےٹیکس ایمنسٹی سکیم کے ذریعے تاجر وں میں موجود ٹیکس چوروں کو تحفظ دیا ہے ۔

درخواست گزار کے وکیل کا کہنا تھا کہ ٹیکس ایمنسٹی سکیم تاجروں اور عام شہریوں میں امتیازی سلوک ہے اور جزا و سزا کے اصولوں کے منافی ہے۔ ٹیکس چوروں کو عام معافی آئین پاکستان اور ملکی قوانین کی خلاف ورزی ہے‘ آئین کے تحت شہریوں سے امتیازی سلوک نہیں کیا جاسکتا اور نہ ہی ٹیکس چوروں کو رعایت دی جا سکتی ہے ۔

ٹیکس ایمنسٹی اسکیم کے مطلوبہ نتائج حاصل نہیں ہوسکے: نعیم میر

انہوں نے عدالت سے استدعا کی کہ سکیم کے لیے انکم ٹیکس ایکٹ میں ترمیم کی جائے اور سیاسی مقاصد کے حصول کے لیے حکومت کی جانب سے متعارف کرائی جانے والی ٹیکس ایمنسٹی سکیم کو کالعدم قرار دیا جائے۔

وفاقی حکومت کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ یہ سکیم ان تاجروں کےلئے ہے جنہوں نے پچھلے دس سال سے ٹیکس نہیں جمع کرایا ‘ تاجروں پر معمولی ٹیکس کے نفاذ سے ٹیکس نیٹ میں لانے کے لئے سکیم متعارف کرائی گئی۔جس پر عدالت نے فریقین کےوکلاء کے دلائل مکمل ہونے کے بعد فیصلہ محفوظ کر لیا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں