The news is by your side.

Advertisement

ٹیکس کی عدم وصولی ملکی اقتصادی ترقی میں بڑی رکاوٹ ہے، رپورٹ

اسلام آباد: پاکستان میں ٹیکس کی وصولی کے ناقص انتظام کے باعث ملکی معیشت کو چلانے کیلئے شدید مشکلات کا سامنا ہے۔

تفصیلات کے مطابق بین الاقوامی تنظیم رفتار کی رپورٹ کے مطابق پاکستان کی معاشی حالت بہتر نہ ہونے کی وجہ اس کے ٹیکس وصولی کے نظام میں خرابیاں ہیں، اور ٹیکس کے اہداف مکمل کرنے کے طریقے بہتر نہ ہونے سے ملکی معاملات کو پورا کرنے میں شدید مشکلات درپیش ہیں، یہ بات رفتار نے اپنی رپورٹ میں کہی۔

پاکستان کی اکنامک سروے رپورٹ کے مطابق سال 2014-15 کے درمیان ملکی معیشت میں  4.24 فیصد اضافہ ہوا، جبکہ فی کس آمدنی 9.25 بڑھی تھی، جس سے پاکستان میں سرمایہ کاری میں نمایاں اضافہ ہوا، سرمایہ کاروں کی حوصلہ افزائی ہوئی، جبکہ اس جاری کردہ رپورٹ کے مطابق پاکستان کی معیشت قرضوں اور امداد پر انحصار کرتی ہے۔

پاکستان کی کل مجموعی پیداوار 9.4 فیصد ہے جو کہ دنیا میں کم ترین میں سے ایک ہے، عوامی قرضے سترہ ٹریلین روپے سے تجاوز کر چکے ہیں اور اس کا تناسب سا ل 2008 سے تین فیصد سے زائد ہوگیا ہے۔

پاکستان کی ٹیکس آمدنی کا 44 فیصد سود کی مد میں چلا جاتا ہے،  مذکورہ رپورٹ پاکستان کے ٹیکس کلچر پر الزام عائد کرتی ہے، جس میں ٹیکس وصولی کا طریقہ کار ناقص بیان کیا گیا ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پاکستان میں ٹیکس 68 فیصد بجلی، پانی اور اشیائے خوردونوش پر وصول کیا جا تا ہے جس کا براہ راست اثر غریب عوام پر پڑتا ہے۔

اس کے علاوہ ٹیکس کی عدم وصولی توانائی کے منصوبوں پر بھی اثر انداز ہوتی ہے، جس کی وجہ سے پاکستان میں موسم گرما میں 4000 میگا واٹ کی کمی کا سامنا رہتا ہے، جس کے سبب جی ڈی پی کو سالانہ 15 ارب ڈالر نقصان برداشت کرنا پڑتا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں